کرکٹ آسٹریلیا کو بال ٹمپرنگ سکینڈل کا اب تک کا سب سے بڑا جھٹکا لگ گیا، سب سے بڑے عہدیدار نے استعفے کا اعلان کر کے ہلچل مچا دی

کرکٹ آسٹریلیا کو بال ٹمپرنگ سکینڈل کا اب تک کا سب سے بڑا جھٹکا لگ گیا، سب سے ...
کرکٹ آسٹریلیا کو بال ٹمپرنگ سکینڈل کا اب تک کا سب سے بڑا جھٹکا لگ گیا، سب سے بڑے عہدیدار نے استعفے کا اعلان کر کے ہلچل مچا دی

سڈنی (ڈیلی پاکستان آن لائن) آسٹریلین کھلاڑیوں کے بال ٹمپرنگ سکینڈل کا سب سے بڑا جھٹکا لگ گیا ہے اور کرکٹ آسٹریلیا کے چیف ایگزیکٹو جیمز سدرلینڈ نے اس سکینڈل کے باعث عہدہ چھوڑنے کا اعلان کر دیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں۔۔۔مظلوم فلسطینیوں سے اظہار یکجہتی،ارجنٹنیا نے اسرائیل کے ساتھ پری ورلڈ کپ میچ کھیلنے سے انکار کر دیا 

سدرلینڈ مجموعی طور پر 20 سال تک کرکٹ آسٹریلیا کیساتھ منسلک رہے ہیں جن میں سے وہ 17 برس چیف کے ایگزیکٹو کے عہدے پر قائم رہے۔ انہوں نے آسٹریلین کرکٹ بورڈ کو 12 مہینے کا نوٹس دیدیا ہے اور بہترین متبادل ملنے پر وہ اپنے عہدے سے دستبردار ہو جائیں گے۔

استعفے کا اعلان کرتے ہوئے سدرلینڈ نے کہا کہ ”کرکٹ آسٹریلیا میں 20 سال گزارنے کے بعد اب وقت آ گیا ہے۔ میں بہت زیادہ پرسکون ہوں کہ میرے اور کرکٹ کے کھیل کیلئے یہ ہی صحیح وقت ہے۔“

مارچ میں جنوبی افریقہ کیخلاف تیسرے میچ کے دوران کھلاڑی بین کرافٹ، کپتان سٹیو سمتھ اور نائب کپتان ڈیوڈ وارنر کی جانب سے بال ٹمپرنگ کا معاملہ سامنے آیا تو جیمز سدرلینڈ پر بھی استعفے کیلئے کافی دباﺅ ڈالا گیا۔ تینوں کھلاڑیوں کو مقامی اور بین الاقوامی سطح پر ہر طرح کی کرکٹ کھیلنے سے روک دیا گیا جبکہ کوچ ڈیرین لیمن نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دیدیا تھا۔

مزید : کھیل

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...