وفاقی بجٹ میں سیلز ٹیکس کو سنگل ڈیجٹ پر لایا جائے: پیاف

  وفاقی بجٹ میں سیلز ٹیکس کو سنگل ڈیجٹ پر لایا جائے: پیاف

  

لاہور (لیڈی رپورٹر)چیئرمین پاکستان انڈسٹریل اینڈ ٹریڈرز ایسوسی ایشن فرنٹ (پیاف) میاں نعمان کبیرنے وفاقی بجٹ 2020-21 کی آمد سے پہلے حکومت سے کہا ہے کہ COVID-19 کے تناظر میں صنعت وتجارت کو زیادہ سے زیادہ ریلیف فراہم کیا جائے اور موجودہ ملازمتوں کو برقرار رکھنے بلکہ نئے روزگار پیدا کیے جائیں۔ چیئرمین پیاف میاں نعمان کبیر نے سیئنر وائس چیئرمین ناصر حمید خان اور وائس چیئرمین جاوید اقبال صدیقی کے ہمراہ، متعدد تجارتی اور صنعتی شعبوں کے مشترکہ اجلاس میں، بھی شرکت کرتے ہوئے، حکومت کو ٹیکسوں میں واضح کمی کرنے کی تجویز پیش کی، جس سے معیشت کی بحالی میں مدد ملے گی۔میاں نعمان کبیر نے کہا کہ پیاف نے تمام کاروباری شعبوں کی مشاورت سے اپنی بجٹ کی تجاویز کو حتمی شکل دے دی ہے، اور متعلقہ حکام سے زور دیا ہے کہ وہ انہیں -21 2020 کے بجٹ میں شامل کریں۔حکومت 12 جون کو وفاقی بجٹ پیش کررہی ہے۔حکومت کے لئے آئندہ بجٹ میں مالی خسارے کو کم کرنا اہم چیلنج ثابت ہو گاکیونکہ حکومت نہ صرف کوویڈ 19 کے وباء سے متعلق زیادہ اخراجات میں حصہ لے گی بلکہ ملکی معیشت مجموعی طور پر سست روی کی وجہ سے محصولات کو بھی متاثر کرے گی. انہوں نے حکومت سے اپیل کی کہ ٹیکسوں کے نئے اقدامات کے بجائے خاص طور پر دستاویزی اور رجسٹرڈ ایس ایم ایز کی امداد پر زیادہ توجہ دی جانی چاہئے۔بجٹ کو کاروباری دوست بنانے کے لئے حکومت کو تجاویز کی ایک سیٹ فراہم کرنے کے پیش نظر بجٹ کے لئے تجاویز کی تیاری کے لئے پیاف نے تمام تجارتی انجمنوں کو بورڈ میں لے لیا ہے۔ پیاف نے حکومت پر زور دیا ہے کہ وہ سیلز ٹیکس کو سنگل ڈیجٹ پر لائے جبکہ کاروباری سرگرمیوں میں اضافے کو آسان بنانے اور محصول کو بہتر بنانے کے لئے کلیدی پالیسی سود کی شرح کم از کم 5 فیصد کردی جائے۔بزنس کمیونٹی کی مشکلات کو مدنظر رکھتے ہوئے حکومت کو کاروبار کی لاگت کو کم کرنا ہوگا، نئی سرمایہ کاری کی حوصلہ افزائی کرنا ہوگی، صنعتی کاری کو فروغ دینا ہوگا اور لاکھوں نئی ملازمتیں پیدا کرنی ہوں گی تاکہ وہ وبائی بحران سے نکل سکیں۔ سینئر وائس چیئرمین پیاف ناصر حمید خان نے حکومت کو چھ ماہ کی مدت کے لئے کاروباری اداروں کے بجلی اور گیس کے بلوں کو موخر کرنے کی سفارش کی۔

انہوں نے حکومت کو تجویز پیش کی کہ تعمیراتی شعبے کو دی جانے والی چھوٹ کے عین مطابق اگلے دو سالوں کے لئے معیشت کے تمام شعبوں میں کسی بھی قسم کی سرمایہ کاری پر ذرائع آمدنی کے بارے میں نہ پوچھا جائے۔ کوڈ 19 کیتناظر میں حکومت کو چاہئے کہ وہ کم از کم چھ ماہ کے لئے کاروباری اداروں کی سود کی ادائیگی کو موخر کرے، اس کے علاوہ تمام تجارتی اور صنعتی شعبوں کے لئے بجلی کے نرخوں کو 7.5 سینٹ فی کلو واٹ تک کم کرے۔ایس ایم ایز تک فنانس کی رساء کو بہتر بنانے کے پیش نظر، پی آئی اے ایف نے تجویز پیش کی کہ حکومت دستاویزی اور ٹیکس ادا کرنے والے ایس ایم ایز کے لئے بلا سود قرضوں کی اسکیم متعارف کرائے۔ اس کے علاوہ تجارت کی موجودہ ساکھ کی حد اور ہر قسم کی صنعت کو بھی بڑھایا جانا چاہئے جس نے مختلف بینکوں سے قرض لیا ہے۔وائس چیئرمین پیاف جاوید صدیقی نے حکام پر زور دیا کہ ٹیکس اور درآمدی ڈیوٹی کے تناسب کو نمایاں طور پر کم کیا جائے، اس کے علاوہ انکم ٹیکس اور اضافی انکم ٹیکس کی چھوٹ کے ساتھ تجارت اور صنعتوں کو ان کی بقا کو یقینی بنانے کے لئے اعانت فراہم کرنا ہے۔

مزید :

کامرس -