میڈیا خطرناک بیماریوں سے آگاہی کیلئے فعال کردار ادا کرے:فرخ حبیب

میڈیا خطرناک بیماریوں سے آگاہی کیلئے فعال کردار ادا کرے:فرخ حبیب

  

 لاہور(سٹی رپورٹر)پنجاب یونیورسٹی میں ہیلتھ لٹریسی اور پبلک پالیسی کے موضوع پر ویبینار۔ وزیر مملکت۔ برائے اطلاعات و نشریات، وفاقی پارلیمانی سیکرٹری برائے صحت ڈاکٹر نوشین حامد، وایس چانسلر جامعہ پنجاب ڈاکٹر نیاز اختر، پرو وائس چانسلر ڈاکٹر سلیم مظہر، ڈائریکٹر ڈیپارٹمنٹ آف ڈویلپمنٹ کمیو نیکیشن ڈاکٹر عائشہ اشفاق، ڈائریکٹر ڈیپارٹمنٹ آف ڈیجیٹل میڈیا ڈاکٹر سویرا شامی اور اینکر پرسن ارملا حسن کی شرکت۔ ڈیپارٹمنٹ آف ڈویلپمنٹ کمیونیکیشن نے ڈیپارٹمنٹ آف ڈیجیٹل میڈیا کے اشتراک سے ویبینار کا اہتمام کیا۔وزیر مملکت فرخ حبیب کا کہنا تھا کہ متعدی امراض بالخصوص کورونا، صحت کے مسائل اور دستیاب سہولیات برائے آگاہی ہمیشہ سے ایک بڑا چیلنج رہا ہے۔ کورونا کی پہلی لہر سے تیسری لہر تک حکومت کو عوامی آگاہی بارے شدید مشکلات کا سامنا رہا اور اس سلسلے میں پنجاب یونیورسٹی کی آگاہی مہم اور کردار قابل تعریف ہے۔ صحت عامہ اور اس سلسلے میں آگاہی کے لئے میڈیا کا کردار مزید فعال ہونا چاہیے۔ ڈاکٹر نوشین حامد نے کہا کہ صحت عامہ کے حوالے سے معلومات کا فقدان بنیادی طور پر کم شرح خواندگی کی وجہ سے ہے، بہتر تعلیم اور  میڈیا کے موثر کردار سے اس خلا کو پر کیا جا سکتا ہے۔ وائس چانسلر ڈاکٹر نیاز اختر کی رائے تھی کہ تمام تر دستیاب میڈیا پلیٹ فارمز کا مربوط امتزاج صحت عامہ برائے موثر ابلاغ کر سکتا ہے۔ اس سلسلے میں صحت عامہ کے ماہرین کیساتھ ساتھ ماہرین تعلیم کے درمیان تواتر کیساتھ مکالمہ بھی وقت کی اہم ضرورت ہے۔ پرو وائس چانسلر ڈاکٹر سلیم مظہر کا ماننا تھا کہ دقیہ نوسی معلومات معاشرے میں صحت عامہ کے حوالے سے مسائل کی جڑ ہیں۔ ویبینار کا بحثیت میزبان آغاز کرتے ہوئے ڈاکٹر عائشہ اشفاق نے پاکستان میں صحت عامہ اور میڈیا کے کردار پر اعداود و شمار کی بنیاد پر روشنی ڈالی اور کہا کہ پاکستان جیسے ترقی پذیر ممالک میں بد قسمتی سے صحت عامہ بارے ابلاغ کمزور اور سطحی نوعیت کا ہوتا رہا ہے۔ ویبینار کے اختتام پر شعبہ ڈیجیٹل میڈیا کی سربراہ ڈاکٹر سویرا شامی نے موبائل فون اور ڈیجیٹل میڈیا کی صحت عامہ کی اہمیت سے شرکا کو آگاہ کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ سرکار کے ساتھ ساتھ تعلیمی اداروں اور موثر آوازوں کو مختلف ایپلی کیشنز کے ذریعے رفاعی پیغامات عام کرنے ہوں گے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -