پاکستان مذہب کے نام پر نفرت کا متحمل نہیں ہو سکتا،حسین محی الدین

پاکستان مذہب کے نام پر نفرت کا متحمل نہیں ہو سکتا،حسین محی الدین

  

لاہور(نمائندہ خصوصی )صدر منہاج القرآن انٹرنیشنل ڈاکٹر حسین محی الدین قادری نے کہا ہے کہ پاکستان مذہب اور مسلک کے نام پر نفرتوں اور تقسیم کا متحمل نہیں ہو سکتا۔ نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمد کے حوالے سے حکومتی اقدامات کا خیر مقدم کرتے ہیں ان اقدامات کا آغاز 4سال قبل ہوجانا چاہیے۔ دہشتگردی ، انتہاء پسندی سے جنم لیتی ہے غیر ملکی فنڈنگ کا مکمل خاتمہ ہونا چاہیے، نفرت پر مبنی خطابات اور مواد کی اشاعت ناقابل معافی جرم ہے ۔ نیشنل ایکشن پلان کے 20نکات پر عمل درآمد سے انتہاء پسندی کو جڑ سے ختم کرنے میں مدد ملے گی ۔ گزشتہ روز انہوں نے اپنے بیان میں کہا کہ اسلام دین رحمت اور امن سلامتی ہے اسلام میں بے گناہ کی جان لینا،فساد فی الارض کرنا سنگین جرم ہے۔آئین پاکستان بھی دہشتگری کی ممانعت کرتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ قائد تحریک منہاج القرآن ڈاکٹر محمدطاہر القادری ملک و قوم کے وسیع تر مفاد میں قومی ایکشن پلان کی حمایت کی تھی مگر ماضی کے حکمرانوں کی ترجیحات میں دہشتگردی اور انتہا پسندی کا خاتمہ شامل نہیں تھا ۔غیر ملکی فنڈنگ پر پلنے والے بعض عناصر پاکستان میں نفرت اور فرقہ واریت پھیلانے کی ڈیوٹی پر ہیں ۔ ماضی میں ایسے عناصر کے جرائم سے صرف نظر کیا گیا اور نتیجتاً پاکستان کو 70ہزار سے زائد جانی قربانیوں اور اربوں ڈالر کے مالی نقصانات سے گزرنا پڑا اب وقت آگیا ہے کہ پاکستان کے امن سے کھیلنے اور اسلام کو بدنام کرنے والے عناصر سے آہنی ہاتھوں سے نمٹا جائے۔ تنگ نظری،انتہا پسندی اور آج کا پاکستان ایک ساتھ نہیں چل سکتے۔

حسین محی الدین

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -