چارسدہ پیپر ملز کی اراضی پر گارڈن شپ کی تعمیر کیخلاف مظاہرہ

چارسدہ پیپر ملز کی اراضی پر گارڈن شپ کی تعمیر کیخلاف مظاہرہ

  

چارسدہ(بیورو رپورٹ)صنعتی مزدور وں کا چارسدہ پیپر ملز کی اراضی پر حاجی صاحب ترنگزئی ماڈل ٹاؤن کے تعمیرکے خلاف مظاہرہ۔ مظاہرین نے ہاتھوں میں پلے کارڈ اٹھائے تھے۔ جس پر مختلف نعرے درج تھے۔ مزدور وں کا پنشن بڑھانے اور چارسدہ پیپر ملز سے ہاوسنگ سوسائٹی ختم کرکے صنعتی زون بنانے اور لیبر کالونی کے کوارٹرز مزدوروں کو مالکانہ حقوق پر دینے کا بھی مطالبہ ۔مطالبات منظور نہ کئے گئے تو حاجی ترنگزئی ماڈل ٹاون کے دفاتر پر دھاوا بول دینگے۔ اس حوالے سے پیپرز ملز مزدور ں یونین کی جانب سے چارسدہ پریس کلب کے سامنے مظاہرہ کیا گیا جس میں سینکڑوں مزدوروں سمیت مختلف سیاسی جماعتوں کے راہنماؤں نے شرکت کی۔اس موقع پرمظاہرے سے پاکستان تحریک انصاف کے ضلعی راہنما عابد خان ، پیپر ملز اراضی مالکان محمد جمشید وغیرہ ، مزدور یونین کے صدر اجمل علی خان ،فضل نہاراورسید رحمان سمیت دیگر نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ چارسدہ پیپر ملز کے اراضی پر جعل سازی سے ہاؤ سنگ سکیم شروع کی گئی اور عوام کو دھوکہ دینے کے لئے اس کا نام برصغیر کے عظیم مجاہد حاجی صاحب ترنگزئی کے نام سے منسوب کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہ آج سے کئی دہائی پہلے چارسدہ کے عوام نے زمین صنعتی زون بنانے کے لئے فراہم کی تھی لیکن آج بدقسمتی سے چارسدہ میں شوگر ملز اور پیپر ملز دونوں کارخانے بند کئے گئے ہیں اور صنعتی اراضی کو ہاؤسنگ سکیموں میں تبدیل کیا گیا ہیں جو ہمیں کسی صورت منظور نہیں ۔ا س حوالے سے ان کا مزید کہنا تھا کہ مذکورہ ہاوسنگ سکیم کے خلاف عدالت میں کیس جاری ہے مگر سپریم کورٹ کے فیصلے کے باوجود ہاؤ سنگ سکیم پر غیر قانونی اور غیر آئینی کام جاری ہے جو کہ توہین عدالت کے زمرے میں آتاہے۔ انہوں نے کہا کہ کسی کو پیپر ملز کے اراضی پر غیر قانونی طریقے سے تعمیر اتی کاموں کی ہر گز اجازت نہیں دی جائیگی ۔ انہوں نے مزدورں کا پنشن 6ہزار سے بڑ ھا کر 15ہزار بڑھانے اور لیبر قانون کے مطابق مزدوروں کو ہیلتھ اور یگر مراعات فراہم کرنے کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے چارسدہ پیپر ملز کو دوبارہ چالو کرنے اور خالی اراضی پر صنعتی بنانے کا بھی مطالبہ کیا ۔ مظاہرین نے واشگاف الفاظ میں کہاکہ مطالبات منظور نہ کئے گئے تو حاجی ترنگزئی ماڈل ٹاون کے دفاتر پر دھاوا بول دینگے ۔ ۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -