فیاوض چوہان کی بار بار معذرت مسترد، استعفی لے لیا گیا

فیاوض چوہان کی بار بار معذرت مسترد، استعفی لے لیا گیا

  

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک ،جنرل رپورٹر)حکومت نے ہندو کمیونٹی کے بارے میں نازیبا اور غیر اخلاقی ریمارکس دینے پر فیاض الحسن چوہان کی وزارت سے چھٹی کرادی،،وزیر اعلیٰ پنجاب نے غیراخلاقی اور متنازعہ بیان پر چوہان کی وضاحت اور معذرت بھی قبول نہ کی ۔ذرائع کے مطابق وزیر اعلی پنجاب سردار عثمان بزدار کو ہدایت کی گئی ہے کہ اگر فیاض الحسن چوہان استعفیٰ نہ دیں تو انہیں برطرف کردیاجائے ۔ادھر حکومت نے سید صمصام بخاری کو وزارت اطلاعات کا قلمدان سونپ دیاہے جوآج بروزبدھ عہدے کا حلف اٹھائیں گے ذرائع کا کہنا ہے کہ صمصام بخاری کا نام وزیراعظم نے دیا تھا اور ان کا کہنا تھاکہ ان کا ماضی میں بھی کافی تجربہ ہے۔ واضح رہے صمصام بخاری پیپلز پارٹی کے دور میں وفاقی وزیر اطلاعات رہ چکے ہیں۔دوسری طرف فیاض الحسن چوہان نے کہا ہے کہ وزارت عمران خان کی امانت تھی ، میری وجہ سے پارٹی پر مشکل آئی اس لئے وزارت سے مستعفی ہو گیا ہوں۔ فیاض چوہان کی جانب سے ایک تقریب میں ہندؤں کے خلاف انتہائی نا زیبا ریمارکس دئیے گئے تھے اور میڈیا کی نشاندہی پر وزیر اعظم عمران خان نے اس کا سختی سے نوٹس لیتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب کو کارروائی کرنے کے احکامات جاری کئے گئے تھے ۔فیاض الحسن چوہان کے ریمارکس پر وفاقی اور صوبائی کابینہ ، پارٹی کے اقلیتی اراکین اسمبلی ،رہنماؤں اور اپوزیشن کی جانب سے بھی شدید تنقید کی گئی جبکہ فیاض الحسن چوہان سے وزارت واپس لینے اور انہیں ڈی سیٹ کرنے کیلئے قرارداد یں بھی قومی اور پنجاب اسمبلی میں جمع کرا دی گئیں ۔ ذرائع کے مطابق فیاض الحسن چوہان نے معاملے کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے پیشگی اپنے بیان پر وضاحت جاری کر کے معذرت بھی کر لی تھی تاہم شدید ردعمل کے باعث پارٹی نے ان کی وضاحت اور معذرت کو قبول کرنے سے انکار کر دیا اور غیر اخلاقی بیان پر ان سے استعفیٰ لے لیا۔

فیاض چوہان کی چھٹی

مزید :

صفحہ اول -