پیکا آرڈیننس کی منسوخی کیلئے قرار داد جمع کرادی،امید ہے حکومتی ارکان حمایت کرینگے:شہباز شریف

  پیکا آرڈیننس کی منسوخی کیلئے قرار داد جمع کرادی،امید ہے حکومتی ارکان ...

  

      لاہور(نیوزایجنسیاں)مسلم لیگ (ن)کے صدر اور قائد حزب اختلاف شہبازشریف نے کہا ہے امید ہے پارلیمنٹ میں حکومتی ارکان پیکا کیخلاف ووٹ دیں گے۔ نجی ٹی وی کے مطابق ہفتہ کو ایسوسی ایشن آف الیکڑانک میڈیا ایڈیٹز اینڈ نیوز ڈائریکٹرز (ایمینڈ)کے نومنتخب عہدیداروں سے ملاقات میں مبارک دیتے ہوئے شہبازشریف نے کہا کہ آپ نے قیادت ایسے مرحلے پر سنبھالی ہے جب صحافت اور اظہار رائے کی آزادی پر کاری حملے ہورہے ہیں، آئین میں دی گئی آزادیوں پر سیاہ قوانین کے ذریعے شب خون مارا جارہا ہے۔شہباز شریف نے کہاکہ دستور میں دی گئی صحافت، اظہار رائے اور شہری آزادیوں کے تحفظ اور فروغ کی جدوجہد میں آپ کے ساتھ ہیں، صحافت اور سیاست جمہوری نظام کی بقاء، فروغ اور تحفظ میں ہمیشہ ساتھ ساتھ رہے ہیں، صحافت اور سیاست دونوں کے بغیر کسی ایک کی آزادی قائم نہیں رہ سکتی۔اپوزیشن لیڈر نے کہا کہ ہم پیکا کالے قانون کو مسترد کرچکے ہیں، آرڈیننس کی پارلیمنٹ سے منسوخی کیلئے قرارداد جمع کرادی ہے، امید ہے کہ حکومت کے اتحادی اور باضمیر حکومتی ارکان بھی پیکا آرڈیننس کی منسوخی کے لئے قرارداد کے حق میں ووٹ دیں گے۔دوسری جانب شہباز شریف نے کہا ہے کہ حالیہ مہینوں میں دہشتگردی کے واقعات میں اضافے کے بعد قوم انتظار میں ہے کہ حکومت کب دہشت گردی کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کی عملی کوششوں کا آغاز کرے گی۔ ٹوئٹر بیان میں انہوں نے کہا کہ حکومت ابھی تک بیانات کے علاوہ کوئی حکمت عملی طے نہیں کر سکی،اس وقت صرف پاکستانی عوام ہی خطرے میں نہیں بلکہ ہماری پالیسیاں بھی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دہشتگردی کے خلاف جنگ میں ہماری محنت سے حاصل کردہ کامیابیاں بھی خطرے میں پڑ چکی ہیں۔دوسری جانب حکومت کیخلاف تحریک عدم اعتماد کے حوالے سے مسلم لیگ (ن) کے اعلیٰ سطحی اجلاسوں کاسلسلہ جاری ہے۔شہباز شریف کی رہائشگاہ پر مسلم لیگ (ن) کے سینئر رہنماؤں کا اجلاس ہوا جس میں تحریک عدم اعتماد کے حوالے سے حکمت عملی بارے تبادلہ خیال کیا گیا۔ ذرائع کے مطابق شہباز شریف کی رہائشگاہ پر ہونے والے اجلاس میں سردار ایاز صادق، خواجہ سعد رفیق، رانا ثنا اللہ، عطا اللہ تارڑ سمیت دیگر شریک ہوئے۔اجلاس میں حکومت کے خلاف تحریک عدم اعتماد کے حوالے سے مشاورت کی گئی، اجلاس میں حکومتی ناراض ارکان کی تعداد کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا گیا۔ اجلاس میں موجودہ ملکی سیاسی صورتحال اور پارٹی امور پر بھی تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا۔یاد رہے کہ تحریک عدم اعتماد کے لئے مسلم لیگ (ن) کے اجلاسوں کا سلسلہ گزشتہ کئی روز سے جاری ہے۔

شہباز شریف

مزید :

صفحہ اول -