دیامر بھاشا ڈیم کی تعمیر سے45سو میگا واٹ سستی بجلی حاصل ہوگی

دیامر بھاشا ڈیم کی تعمیر سے45سو میگا واٹ سستی بجلی حاصل ہوگی

  

لاہور(کامرس رپورٹر‘جنرل رپورٹر)چیئرمین لاہور ٹاﺅن شپ انڈسٹریز ایسوسی ایشن ظہیر بھٹہ نے ورلڈ بنک سے فنڈز ملنے سے انکار کے بعد وفاقی حکومت کی جانب سے دیا مر بھاشا ڈیم اپنے وسائل سے تعمیر کرنے کا فیصلہ کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا ہے کہ دیامر بھاشا ڈیم کی تعمیر سے45سو میگا واٹ سستی بجلی حاصل ہوگی دیامر بھاشا ڈیم کی تعمیر ملک کو اندھیروں سے روشنیوں کی طرف لائے گی۔انہوں نے کہا کہ پن بجلی منصوبے سستی بجلی کے حصول کے آسان ذرائع ہیں ،حکومت کالا باغ ڈیم منصوبہ بھی شروع کرے ۔تاکہ توانائی بحران پر قابو پایا جاسکے ۔بڑے ڈیم نہ ہونے سے سالانہ 2 کروڑ 98لاکھ ایکڑ فٹ پانی ضائع ہورہا ہے ضرورت اس امر کی ہے کہ اس پانی کو ڈیم بنا کر سستی بجلی اور زراعت کے لیے استعمال کیا جائے ۔ ۔ ان خیالا ت کا اظہار انہوں نے میاں خرم الیاس سینئر وائس چیئرمین ،عامر عطاءباری وائس چیئرمین کے ساتھ ٹاﺅن شپ انڈسٹریز کے صنعتکاروں کے مختلف وفود سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ظہیر بھٹہ نے بجلی کی لوڈشیڈنگ میں اضافہ پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ توانائی بحران کے باعث ملکی معیشت کو ناقابل تلافی نقصان پہنچ رہا ہے پچھلے چھ سالوں کے دوران بیرونی سرمایہ کاری میں 73فیصد کمی واقع ہوئی ہے تین سال کے دوران ملٹی نیشنل کمپنیوں کی سرمایہ کاری 14ارب روپے سے کم ہوکر صرف 4ارب روپے رہ گئی ہے۔

، توانائی بحران اور بجلی کی لوڈشیڈنگ کے باعث ملک میں اربوں روپے نقصان ہورہا ہے۔اس لیے حکومت توانائی بحران کے خاتمہ اور سستی بجلی کے حصول کی طرف خصوصی توجہ دے ،انڈسٹریز کولوڈشیڈنگ سے مستثنیٰ قرار دیا جائے اور مسلسل بجلی کی فراہمی کویقینی بنایا جائے تاکہ صنعتی یونٹ پوری پیداواری صلاحیت سے کام کرسکیں،اس سے حکومت کی صنعتی ترقی کا خواب بھی شرمندہ تعبیر ہوگا اوربجلی بحران کے خاتمہ کے بعد نئی انڈسٹریز کے قیام سے ملک میںروزگار کے وافر مواقع فراہم ہونگے اور بے روزگاری جیسے اہم مسئلہ پر بھی قابو پایا جاسکے گا۔

مزید :

کامرس -