افغانستان سے بڑی حد تک پولیووائرس پاکستان منتقل ہو رہا ہے،ماہرین

افغانستان سے بڑی حد تک پولیووائرس پاکستان منتقل ہو رہا ہے،ماہرین

  

لاہور(محمد نواز سنگرا)قبائلی علاقوں میں پولیومہم کی راہ میں رکاوٹیں سفری پابندیوں کی بڑی وجہ ہے۔ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کی پابندی کی وجہ سے سب سے زیادہ لیبر ویزے پر بیرون ملک جانےوالا مزدور متاثر ہو گا۔حکومتی سستی اور افغانستان کی وجہ سے پولیو مریضوں میں اضافہ ہو رہا ہے۔ہیلتھ ڈیپارٹمنٹ کلیرنس سرٹیفکیٹ جاری کرے گا۔ڈاکٹر یاسمین راشد نے روز نامہ پاکستان سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ سفری پابندیوں کی وجہ سے پاکستان میں زر مبالہ بھی کم ہو جائے گا جو معیشت کےلئے بھی نیک شگون نہیں ہے۔پولیو کو شروع دن دے پاکستان سے خاتمہ نہیں ہو سکا جبکہ افغانستان سے بھی بڑی حد تک پاکستان میں پولیوکی منتقلی ہو رہی ہے۔سب سے زیادہ بچے پولیو کا شکار ہو تے ہیں لیکن بڑے بھی متاثر ہو سکتے ہیں شک دور کرنے کےلئے تمام عمر کے لوگوں کےلئے ویکسین لازمی قرار دی گئی ہے۔پروفیسر ریاض بھٹی نے بتایا کہ پاکستان پر پولیو کی وجہ سے سفری پابندیاں دنیا میں پاکستان کو بدنام کرنے اور پاکستانیوں کی ذلیل و رسوا کرنے والی سازشوں میں سے ایک ہے۔اگر قبائلی علاقوں میں ویکسین باقاعدگی سے پلائی جاتی اور ورکرز کو نشانہ نہ بنایا جاتا تو نوبت یہاں تک نہ آتی۔بیرونی دشمن قوتیں غلط ایجنڈے سے پاکستانیوں کو گمراہ کر رہی ہے جس کےلئے حکومت کو خاطر خواہ کوششیں کرنا ہوں گی۔ڈاکٹر شیخ غضنفر نے کہاکہ پابندیاں کسی ملک کےلئے اچھی نہیں ہوتیں پولیو کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنا چاہئے اور حکومت کو دیئے گئے مقررہ وقت تک کنٹرول کر کے پابندی کا خاتمہ کرانا چاہیے۔

ماہرین

مزید :

علاقائی -