بھارت کی آبی جارحیت بھی جاری!

بھارت کی آبی جارحیت بھی جاری!

  

معاصر کی خبر کے مطابق بھارت نے دریائے چناب میں ایک بار پھر یکطرفہ طور پرپانی کی ترسیل میں کمی کر دی ہے۔بھارت پہلے بھی سندھ طاس معاہدے کی صریحاً خلاف ورزی کرتے ہوئے دریائے چناب کے بالائی حصے پر ڈیم بنا رہا ہے اور پانی کی ترسیل میں بھی کمی کی گئی تھی،اب مزید چار ہزار کیوسک کم کرنے کی خبر ہے۔ یہ تشویشناک عمل ہے۔بھارت مسلسل پاکستان دشمنی کا عمل جاری رکھے ہوئے ہے، کشمیر کے ایک حصے پر ناجائز قبضہ جما کر کشمیریوں کی تحریک آزادی کو جبراً کچلنے کی کوشش کی جا رہی ہے، جبکہ پاکستان کے خلاف آبی جارحیت بھی جاری ہے۔اِس حوالے سے پاکستان کی طرف سے سندھ طاس معاہدے پر عمل درآمد پر زور دیا جاتا ہے، اس کے مطابق راوی اور ستلج پر بھارت کی ترجیح منظور کی گئی تو چناب اور جہلم کا پانی پاکستان کے لئے ہے،لیکن بھارت مقبوضہ کشمیر پر ناجائز قبضے کی وجہ سے پاکستان کے خلاف آبی جارحیت پر مصر ہے اور اِسی حوالے سے پانی کی ترسیل میں کمی کی جاتی ہے۔پاکستان اِس سلسلے میں شکایت کنندہ ہے، تاہم شہریوں کو شکوہ ہے کہ بھارت کی ان کارروائیوں پر ٹھوس قدم نہیں اٹھایا جاتا۔پاکستان کے خلاف بھارتی جارحیت سے کون واقف نہیں،اب پانی میں مزید کمی کا سخت نوٹس لینا اور عالمی ادارے سے رجوع کرنا بھی لازم ہے۔

مزید :

اداریہ -