خالد لطیف اینٹی کرپشن ٹربیونل کے سامنے پیش ،شرجیل خان نے جواب جمع کروانے کیلئے مہلت مانگ لی ،پی سی بی کو ناصر جمشید کے خلاف تحقیقات کی اجازت

خالد لطیف اینٹی کرپشن ٹربیونل کے سامنے پیش ،شرجیل خان نے جواب جمع کروانے ...

  

لاہور ، لندن ( این این آئی) پاکستان سپر لیگ اسپاٹ فکسنگ کے الزام میں معطل کرکٹر خالد لطیف نے پاکستان کرکٹ بورڈ کے اینٹی کرپشن ٹریبیونل کے سامنے پیش ہو کر الزامات کا جواب جمع کروا دیا جبکہ شرجیل خان کو جواب جمع کرانے کے لئے 10مئی تک مزید مہلت مل گئی۔ تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز پاکستان کرکٹ بورڈکے اینٹی کرپشن ٹربیونل نے نیشنل کرکٹ اکیڈمی لاہور میں سماعت کی۔چیئرمین جسٹس (ر) اصغر حیدر، ممبران لیفٹیننٹ جنرل ( ر) توقیر ضیاء اور وسیم باری کے روبرو پی سی بی اینٹی کرپشن یونٹ کے سربراہ کرنل (ر) اعظم ،پی سی بی کے قانونی مشیر تفضل رضوی اور جی ایم لیگ سلمان نصیر، کرکٹر خالد لطیف اور ان کے وکیل بدر عالم پیش ہوئے ۔خالد لطیف نے اپنے وکیل کے ذریعے پی سی بی کی طرف سے لگائے گئے سپاٹ فکسنگ کے الزامات کا جواب جمع کروایا جس میں انہوں نے تمام الزامات مسترد کردیئے۔دریں اثناء برطانوی تحقیقاتی ادارے نیشنل کرائم ایجنسی نے پاکستان کرکٹ بورڈ کو اسپاٹ فکسنگ اسکینڈل کے مرکزی کردار ناصر جمشید کے خلاف تحقیقات کرنے کی اجازت دیدی۔پی سی بی ذرائع کے مطابق ناصر جمشید نے اپنے وکیل کے ذریعے یہ اعتراض اٹھایا تھا کہ چونکہ ان کے خلاف برطانوی نیشنل کرائم ایجنسی اسپاٹ فکسنگ اسکینڈل میں ملوث ہونے کی تحقیقات کر رہی ہے لہٰذا پی سی بی ان کے خلاف تحقیقات نہ کرے۔اس اعتراض کی وجہ سے پی سی بی اور کرکٹ کی عالمی تنظیم (آئی سی سی) نے برطانوی ادارے نیشنل کرائم ایجنسی سے اس معاملے پر رابطہ کیا تھا، جس کے بعد برطانوی تحقیقاتی ادارے نے پاکستان کو پیغام پہنچایا ہے کہ انہیں بیک وقت دو ایجنسیوں کی جانب سے تحقیقات پر کوئی اعتراض نہیں۔ذرائع کے مطابق ادارے کا کہنا تھا کہ پی سی بی چاہے تو اپنی تحقیقات پاکستان میں کرسکتا ہے جبکہ ہم اپنی تحقیقات برطانیہ میں کریں گے۔تاہم اس معاملے پر اب تک ناصر جمشید کا موقف سامنے نہیں آسکا۔

سپاٹ فکسنگ

مزید :

صفحہ اول -