چارسدہ میں شمع رسالتؐ کے پروانوں کی تاریخی ریلی

چارسدہ میں شمع رسالتؐ کے پروانوں کی تاریخی ریلی

  

چارسدہ (بیورورپورٹ)چارسدہ میں شمع رسالت ؐ کے پروانوں کی تاریخی ریلی ۔ تحفظ ختم نبوت ؐ ہمارے ایمان کا حصہ ہے ۔ کسی گستاخ رسالت ؐ کو زمین پر زندہ رہنے کا حق نہیں ۔ شمع رسالتؐ کے پروانے شان رسالتؐ کیلئے سر بکف نکل کر اسلام کے خلاف جاری سازشوں کا مقابلہ کرینگے ۔ ان خیالات کا اظہار مذہبی جماعتوں کی کال پر جمعیت علمائے اسلام ، جماعت اسلامی ، ختم نبوت ؐ، مسلم لیگ ن ،پاکستان پیپلز پارٹی اورسماجی تنظیموں کے مشترکہ شان رسالت ؐ ریلی سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کیا ۔ سابق رکن قومی اسمبلی اور تحریک ختم نبوت کے روح رواں شیخ الحدیث مولانا غلام محمد صادق ،رکن قومی اسمبلی شیخ الحدیث مولانا سید گوہر شاہ ، جماعت اسلامی چارسدہ کے ضلعی امیر محمد ریاض خان، نائب ناظم اعلی مصور شاہ ، جنرل سیکرٹری سیف اللہ خان درانی ،پاکستان مسلم لیگ کے ضلعی صدر میاں ہمایون شاہ ، پاکستان پیپلز پارٹی کے ضلعی نائب صدر ولی محمد مہمند ، تحریک تحفظ ختم نبوت ؐ کے ضلعی امیر مولانا حزب اللہ جان حقانی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سانحہ مردان یونیورسٹی کی آڑ میں توہین رسالت کے قانون میں کسی بھی صورت ترمیم نہیں ہونے دینگے ۔ سانحات و حادثات کے نتیجے میں قانون رسالت ؐ کے آئین میں ترمیم کیلئے ہم اپنے سروں کے قربانی سے بھی دریغ نہیں کرینگے ۔ شان رسالت ؐ کو ہر مسلمان اپنا جز و ایمان سمجھ کر مشال اور ان کے ہم خیالوں کو زندہ درگور کرنے کا تہیہ کریں ۔اس موقع پر کہا گیا کہ توہین رسالت ؐ کے مرتکبین کو عدالتوں سے سزائیں ملنے کے بعد سزا پر عدم عمل درآمد نہ ہونے سے اسلام دشمن قوتوں کو کھلی چوٹ ملی ہے ۔ ریاست سزا یافتہ مرتکبین توہین رسالت کو سولی پر چڑھا کر قوم کو اضطراب اور بے چینی سے نکالے تاکہ تصادم اور خانہ جنگی کی فضا کو ختم کیا جائے ۔ مقررین نے آئمہ کرام اور خطباء پر زور دیا کہ قوم کو درپردہ سازشوں اور اسلام کے خلاف اٹھنے والے ہر قوت سے باخبر کراکے سازشی اسلام اور ریاست کے دشمنوں کے عزائم کو ناکام بنا دیں ۔اس موقع پر ہزاروں افراد سے پیغمبر اسلام ؐکے ناموس پر بیعت لیا گیا ۔ مسلم امہ کے اکابرین قوم کے بہترین انداز میں ترجمانی اور رہنمائی کرکے قوم پر احسان اور یوم محشر پر ساقی کوثر کے ہمنوا بنے ۔ مقررین نے مشال کے ارتدادی اور درپردہ سرگرمیوں پر قتل کئے جانے کو جائز قرار دیتے ہوئے مطالبہ کیا کہ مردود مشال کے قتل میں گرفتار طلبہ قوم کا اثاثہ ہے انہیں فوری طور پر باعزت رہا کر کے اسلام کے نام پر قائم ہونے والے ریاست کے کروڑوں عوام کے خواہشات کا احترام کریں ۔ جلسہ میں میڈیا سے وابستہ بعض لوگوں کی طرف سے مشال خان کے مذہبی عقائد کا دفاع کرنے پر شدید تنقید کی گئی اور حکومت اور ذمہ دار اداروں سے اس حوالے سے ضروری اقدامات کا مطالبہ کیا گیا ۔ ۔عوامی نیشنل پارٹی ، قومی وطن پارٹی اور تحریک انصاف نے ریلی میں شرکت سے گریز کیا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -