قومی احتساب بیورو کسی بھی قیمت پر بدعنوانی کے خاتمے کے لئے پرعزم ہے : قمرزمان چوہدری

قومی احتساب بیورو کسی بھی قیمت پر بدعنوانی کے خاتمے کے لئے پرعزم ہے : قمرزمان ...
قومی احتساب بیورو کسی بھی قیمت پر بدعنوانی کے خاتمے کے لئے پرعزم ہے : قمرزمان چوہدری

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن ) قومی احتساب بیورو (نیب)کے سربراہ  قمرزمان چوہدری نے کہا ہے کہ نیب  کسی بھی قیمت پر بدعنوانی کے خاتمے کے لئے پرعزم ہے جو کہ ہر برائی کی جڑ ہے،نیب کی بنیادی توجہ مالیاتی کمپنیوں کے فراڈ ،  بینک فراڈ ،  بینکوں کے ناہندگان، اختیار کے ناجائز استعمال اور ریاست کے فنڈزمیں حکومتی ملازمین کی جانب سے خرد برد شامل ہے،نیب نے حالیہ 3  سالوں کے دوران ملتان ، سکھر اور گلگت بلتستان میں اپنے تین علاقائی دفتر قائم کرنے سمیت کئی اقدامات اٹھائیں ہیں۔

تفصیلات کے مطابق نیب کی جانب سے جاری ایک بیان میں قمر زمان چوہدری  نے کہا کہ نیب نے بڑی مقدار میں لوٹے گئے پیسے واپس لیکر قومی خزانے میں جمع کرائے ہیں، موجودہ مدت میں نیب نے انسداد بدعنوانی کی حکمت عملی کے تحت جامع اور فعال حکمت عملی اختیار کی ہے جس میں کرپشن کے خلاف آگاہی ،کرپشن  کی روک تھام اور ملک سے اس کو بنیادی برائی  کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کے لئے اقدامات شامل ہیں۔ انہوں نے کہا   کہ نیب کی بنیادی توجہ مالیاتی کمپنیوں کے فراڈ ، بینک فراڈ  ، بینکوں کے ناہندگان، اختیار کے ناجائز استعمال اور ریاست کے فنڈزمیں حکومتی ملازمین کی جانب سے خرد برد شامل ہے، نیب کے تمام ادارہ جاتی کمزوریوں کا جائزہ لے کر اس کے تمام شعبوں کو ازسرنو فعالاور مقدمات نمٹانے کا دورانیہ زیادہ سے زیادہ 10 ماہ کیا گیا ہے، نیب نے سی آئی ٹی کا نیا نظام متعارف کرایا ہے ،  جس میں ڈائریکٹر ،  ایڈیشنل ڈائریکٹر  ، انویسٹی گیشن آفیسر اور سینئر لیگل قونصل شامل ہیں۔انہوں نے کہا کہ نیب نے راولپنڈی میں جدید آرٹ فورینزک سائنس لیبارٹری قائم کی ہے۔نیب کے تمام ریجنز کی کارکردگی کی مانیٹرنگ کے لئے (کیو جی سسٹم ) متعارف کرایا گیا ہے۔جس میں سالانہ بنیادوں پر تمام علاقائی دفاتر اور ہیڈ کوارٹر کی کارکردگی کا جائزہ لیا جاتا ہے۔انہوں نے کہا کہ نیب نے اندرونی احتساب کے میکنزم کا نظام بھی متعارف کرایا ہے اس وقت تک 84آفیسران میں سے 23 کوملازمت سے برخاستگی سمیت بڑی سزائیں دی گئیں ہیں، جبکہ 34 ملازمین  کو معمولی سزائیں دی گئیں ہیں۔ کسی بھی ادارے میں اندرونی طور پر احتساب کی یہ سب سے بڑی مثال اورایک ریکارڈ ہے۔

مزید :

قومی -