پس ِ منظر

پس ِ منظر
پس ِ منظر

  

میں کروناکے دوران قرنطینہ میں اپنے پیارے والد، ڈاکٹر جہانگیر بدر (مرحوم) کی آفس کم لائبریری میں کتابوں کو ترتیب دے رہا تھا، جب تحریری مضامین کے مجموعے پر مبنی"گرینڈ ایجنڈا اور پاکستان" کے نام سے ایک کتاب ملی۔ روزنامہ جنگ میں 1998ء سے 2000ء کے دوران۔ پیارے والد کے ان مضامین میں ملک میں حکمرانی کے مختلف شعبوں کا احاطہ کیا گیا ہے۔ میں نے کتاب کو پڑھنا شروع کیا اور پڑھتے ہوئے میں نے فیصلہ کیا کہ اپنے والد کی میراث، مضامین لکھنے کا سلسلہ، آگے لے کر چلوں۔

جب میں نے کتابوں کو دوبارہ ترتیب دیا تو، ”پاکستان کی آئینی تاریخ“ کے عنوان سے ایک اور کھلی ہوئی کتاب کو دیکھ کر میں حیران رہ گیا۔ میرے والد کے 1977ء میں پنجاب یونیورسٹی میں پڑھا تے ہوئے اس مضمون پر ایک تبصرہ۔ میں نے یہ بھی دیکھا کہ پنجاب یونیورسٹی میں ان کی خدمات کے دوران، 1972ء سے 1977ء تک، میرے پیارے والد نے روزنامہ مشرق میں ”یونیورسٹی راؤنڈ اپ“ کے عنوان سے ہفتہ وار مضامین لکھے، لیکن افسوس کہ ان مضامین کو جمع اور محفوظ نہیں کیا جاسکا۔

بانی پاکستان پیپلز پارٹی، شہید ذوالفقار علی بھٹو نے، پاکستان کی سیاست اور تاریخ کے بارے میں بہت سی کتابیں لکھیں۔ یہاں تک کہ اپنے ڈیتھ سیل سے بھی، انہوں نے ”اگر مجھے قتل کیا گیا“ لکھا تھا۔ اسی روایت کو شہید رانی بے نظیر بھٹو نے آگے بڑھایا، جنھوں نے اپنی سوانح عمری ”دختر مشرق“ لکھی جو پوری دنیا میں مختلف زبانوں میں شائع ہوچکی ہے۔ وہ کئی بین الاقوامی فورموں پر لیکچر دیتے اور بین الاقوامی اور قومی اخبارات کے لئے مضامین لکھتے۔ ہماری جماعت کو تحریروں کا یہ کلچر وراثت میں ملا ہے۔ متعدد رہنماؤں نے اپنے تجربات پر مضامین لکھے۔ میرے پیارے والد نے ضیا کے دور حکومت میں اور اس کے بعد زیادہ تر جدوجہد کے دوران پارٹی کی تاریخ بھی ترتیب دی ہے۔

میرے پیارے والد نے پرویز مشرف کے دور میں، کیمپ جیل۔لاہور سے،”لیڈرکیسے بنیں“ کے عنوان سے، لیڈرشپ پر ایک کتاب لکھ کر کمپوزیشن کے اس ورثہ میں اضافہ کیا۔ قیادت سے متعلق اپنی کتاب کو آگے بڑھاتے ہوئے انہوں نے دو اور کتابیں لکھیں جن کا نام ”ارتقاء جمہوریت“ اور ”خواتین کی قیادت“ ہے۔ ان کے پی ایچ ڈی کے مقالہ کا ایک حصہ انہوں نے شہید رانی بی بی کے ارسال کردہ اور موصولہ خطوط سے مرتب کیا، جن کے پس منظر کی تفصیلات اور تفصیل کے ساتھ، لندن میں اپنی جلاوطنی کے برسوں سے متعلق بیان کیا تھا۔ یہ کام، ”بے نظیر پیپرز“کے عنوان سے بلاول بھٹو زرداری نے 25 اکتوبر 2014ء کو فرانس میں سوشلسٹ پارٹی کے زیر اہتمام لانچ کیا تھا پنجاب یونیورسٹی سے، 2013ء میں، پاکستان کی سیاست میں مزاحمت اور لچک کے موضوع پر ”بے نظیر بھٹو“۔ یہ مقالہ مرتب کیا گیا ہے اور جلد ہی کتاب کی شکل میں چھاپ دیا جائے گا اور ایک بار جب یہ سارا عمل مکمل ہوجائے گا تو اسے لانچ کیا جائے گا۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ یہ پی پی پی اور ہمارے اہل خانہ کے لئے اعزاز کی بات ہے کہ میرے والد جنوبی ایشیاء کے پہلے ورکنگ پارلیمنٹیرین تھے جنھوں نے پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی۔ سینیٹ میں بطور سینیٹر اور قائد ایوان۔

اس مضمون کو لکھنے کی ترغیب مذکورہ کتاب "دی گرینڈ ایجنڈا" سے آئی ہے، ڈاکٹر جہانگیر بدر نے اپنی کتاب میں مضامین اس صدی کے دوران پاکستان کے نظام پر بنیادی اصولوں اور ان کے اثرات پر لکھے تھے۔ انہوں نے اپنی کتاب میں یہ ذکر کیا ہے کہ اکیسویں صدی جمہوریت کی صدی ہے اور جمہوری نظام کے بغیر کوئی بھی نظام عام عوام کے مسائل حل نہیں کرسکتا۔ کسی بھی ڈکٹیٹر کا پروگرام یا ایجنڈا لوگوں کے لئے کچھ نہیں کرسکتا کیونکہ چونکہ عوام اس کا حصہ نہیں ہیں اور یہی وجہ ہے کہ عام لوگوں کی جمہوریت لوگوں کے مسائل حل کرسکتی ہے ہمارے ملک میں جاگیردارانہ نظام کے خاتمے سے عوام کے مسائل کو حل کیا جاسکتا ہے۔ عام آدمی کو تعلیم، صحت، صاف ستھرا ماحول، حقیقی انصاف اور بنیادی سہولیات اور ضروریات تک ملنا چاہئیں اور یہ تب ہی ممکن ہے جب جمہوری حکومتیں، جمہوری ادارے اور جمہوری ثقافت مضبوط ہو۔

میرے پیارے والد نے ان مضامین کو 1998ء سے 2000ء میں لکھنا شروع کیا جب وہ پاکستان پیپلز پارٹی اوورسیز کے صدر تھے اور مشرف کے اقتدار سنبھالنے کے بعد وہ پیپلز پارٹی کے سیکرٹری جنرل بن گئے اور پاکستان کے سینیٹ کے ممبر رہے۔ میری بہادر والدہ، ایک گھریلو خاتون، نے میرے والد کو اکسایا کہ وہ لکھیں، کیوں کہ وہ بہت سارے مقامی فورموں اور پارٹی اجلاسوں میں رہتے ہیں۔ میری بہادر دادی اور میری والدہ نے مجھے اور میرے بہن بھائیوں کے ساتھ، آمریت کے خلاف ٹھوس چٹان کی طرح تمام آمرانہ مشکلات کا سامنا کیا۔ جہانزیب اور مریم۔ میری دادی اور میری والدہ کا سیاست سے براہ راست کوئی واسطہ نہیں تھا لیکن جب بھی ان میں سے کسی کی طرف سے کوئی مشورہ آیا تو میرے والد نے اسے مشکل سے نظرانداز کیا تھا۔

میرے مرحوم والد جنرل (ر) حمید گل (مرحوم) کے مضمون سے،”گرینڈ ایجنڈے“ کے موضوع کو چنتے ہیں اور ان مضامین کو لکھنا شروع کرتے ہیں جو بعد میں اس کتاب کی شکل میں شائع ہوئے۔ میرے پیارے والد مضامین لکھنے کو جاری نہیں رکھتے تھے کیونکہ انہیں مشرف حکومت کے دور میں پاکستان پیپلز پارٹی کے سیکرٹری جنرل ہونے کی وجہ سے گرفتار کیا گیا تھا، کیونکہ ایک چیف مارشل لا ایڈمنسٹریٹر کی حیثیت سے، وہ چاہتے تھے کہ وہ شہید رانی کے ساتھ اپنی وفاداری ختم کردیں۔ بادشاہ کی پارٹی میں شامل ہوں۔ میں اپنے والد کی تحریر کو جاری رکھنے کی ذمہ داری قبول کرتا ہوں۔ میں آپ سب کو بیک گراؤنڈ دینا چاہتا تھا کیوں کہ ”گرینڈ ایجنڈا“ کو بطور عنوان منتخب کیا گیا تھا۔

یہ ان اہم امور پر مبنی تھا، جنہیں جنرل (ر) حمید گل مرحوم نے اپنے مضمون ”ایک گرینڈ ایجنڈا: ایک ضرورت پاکستان کے لئے“ (پاکستان کے لئے ایک عظیم الشان ایجنڈا کی ضرورت) میں، جن پر 29 اپریل 1998ء کو لکھا تھا، پر روشنی ڈالی گئی تھی۔ 1998ء ڈاکٹر جہانگیر بدر نے اپنے ایک مضمون میں یہ بتایا کہ جنرل حمید گل کا مضمون حقیقت پر مبنی تھا جہاں گرینڈ ایجنڈے کے لئے مخصوص الفاظ اور اشارے موجود ہیں۔ اس ایجنڈے کو تفصیلات کے ساتھ ایک عظیم شکل دینے کی ضرورت ہے اور تمام مضامین کے لئے الگ الگ امتیاز اور اس کے مطابق منصوبہ بندی کی جانی چاہئے۔ مثال کے طور پر، اگلے نظام میں سیاست کیسی ہوگی؟ اس کا معاشی نظام، معاشرتی اور انصاف کے نظام موجودہ نظام سے عام لوگوں کی خواہشات کی نمائندگی کیسے کرتے ہیں؟ یہ وہ سوالات ہیں جن کے جوابات ایک بار اس گرینڈ ایجنڈے کی تعریف کریں گے۔

مزید :

رائے -کالم -