شہریوں کے مسائل کو ترجیحی بنیادوں پر حل کیا جائے: آئی جی پنجاب

شہریوں کے مسائل کو ترجیحی بنیادوں پر حل کیا جائے: آئی جی پنجاب

  

  لا ہو ر (کر ائم رپو رٹر)نسپکٹر جنرل پولیس پنجاب شعیب دستگیر نے کہاہے کہ دور جدید میں انفارمیشن ٹیکنالوجی کے موثر استعمال کے بغیر جدید پولیسنگ کا تصور ممکن نہیں لہذا پنجاب پولیس کے آئی ٹی پراجیکٹس بالخصوص پولیس ریکارڈ مینجمنٹ سسٹم، کریمنل ریکارڈمینجمنٹ سسٹم اور ہوٹل آئی سمیت دیگر پراجیکٹس کی کارکردگی کو بہتر سے بہتر بنانے کیلئے انہیں اپ گریڈ کرنے کا سلسلہ جاری رکھا جائے اور سنگین جرائم کی بیخ کنی اور تفتیش کے لیے جیو فینسنگ اور فارنزک سائنس سے بطور خاص استفادہ کیا جائے۔ انہوں نے مزیدکہاکہ عوامی سہولت کیلئے شروع کئے گئے پراجیکٹس فرنٹ ڈیسک، پولیس خدمت مراکز اور 8787کمپلینٹ مینجمنٹ سسٹم کی موثر مانیٹرنگ کو یقینی بنایا جائے اور یہاں موصول ہر درخواست کوٹائم فریم کے اندر حل کیا جائے تاکہ شہریوں کے مسائل کا حل مزیدتیزی سے ترجیحی بنیادوں پر ممکن ہوسکے۔ ویب سائٹ کو شہریوں کی سہولت اور رابطہ کاری کیلئے مزید آسان اور موثر بنایا جائے۔

اور ویب سائٹ پر معلومات کی بروقت فراہمی کو ہر صورت یقینی بنایا جائے جبکہ عوامی سہولت کیلئے شروع کئے گئے پراجیکٹس میں مزید بہتری کیلئے مانیٹرنگ اور انسپکشن کے عمل پر بطور خاص توجہ دی جائے۔ انہوں نے مزیدکہا کہ خدمت مرکز کے گلوبل پورٹل پر بطور خاص توجہ دی جائے اور اپ گریڈیشن کے ساتھ ساتھ اسے اوور سیز پاکستانیوں کے استعمال کیلئے آسان سے آسان بنایا جائے۔ انہوں نے مزیدکہاکہ شہریوں کی سہولت کیلئے خدمت مراکز کی طرز پر انفارمیشن ٹیکنالوجی کے مزید پراجیکٹس شروع کرنے کے حوالے سے پلاننگ کی جائے جبکہ آپریشنل اور انویسٹی گیشن ڈیوٹیز کیلئے بھی نئے سافٹ وئیرز اور ماڈیولز تیار کئے جائیں۔ ا ن خیالات کا اظہار انہوں نے گز شتہ روز سنٹرل پولیس آفس میں منعقدہ اعلی سطحی اجلاس کی صدارت کے دوران افسران کو ہدایات جاری کرتے ہوئے کیا۔اجلاس کے دوران ڈی آئی جی آئی ٹی وقاص نذیر نے آئی جی پنجاب کو پولیس کے زیر استعمال مختلف پراجیکٹس کی کارکردگی کے متعلق بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ پنجاب پولیس سمارٹ اینڈ کمیونٹی پولیسنگ کے اصولوں کے مطابق کرائم کنٹرول اور پبلک سروس ڈلیوری کیلئے انفارمیشن ٹیکنالوجی کو موثر انداز میں استعمال کر رہی ہے جس کی بدولت جرائم پیشہ عناصر کی بیخ کنی کے عمل میں نہ صرف تیزی آئی ہے بلکہ پولیس اور عوام کے درمیان باہمی تعاون کی فضا بھی بہتر ہورہی ہے۔ آئی جی پنجاب نے افسران کو ہدایت دیتے ہوئے کہا کہ سنگین جرائم کی بیخ کنی اور تفتیش کے عمل میں جدید ٹیکنالوجی سے بطور خاص استفادہ کیا جائے تاکہ کم سے کم وقت میں ملزمان کو پابند سلاسل کرکے انہیں سزائیں دلوانے کا عمل تیز سے تیز تر ہوسکے۔ انہوں نے مزیدکہاکہ تھانوں کی ورکنگ کو مزید موثر بنانے کیلئے تمام امور پولیس اسٹیشن ریکارڈ مینجمنٹ کے تحت جاری کردہ ایس او پیز کے مطابق سر انجام دئیے جائیں اور تمام اضلاع میں افسران اپنے آئی ٹی انچارجز کے ساتھ کلوز کوارڈ نیشن رکھیں۔ اجلاس میں ایڈیشنل آئی جی انویسٹی گیشن فیاض احمد دیو، ڈی آئی جی کرائم انویسٹی گیشن ڈاکٹر مسعود سلیم، ڈی آئی جی آئی ٹی وقاص نذیر سمیت دیگر افسران موجود تھے۔

مزید :

علاقائی -