اور پھر ڈھلتی شام__!!

اور پھر ڈھلتی شام__!!
اور پھر ڈھلتی شام__!!

  

کاش وہ__!!

مجھ کو میسر ہوتا

 زیست کے ہر اک دن میں میرے پاس ہوتا

فقط مجھی کو دیکھتا

مجھی کو سنتا__!!

گفتگو کے گلشن میں لہکتے لہکتے 

پھولوں کے مانند__!!

ہم کہیں دور چلے جاتے

وصل کا ہر اک لمحہ

 میری ذات کے خاکے کو تشکیل دیتا

اس میں من پسند رنگ بھرتا

کوئی محبت کا ہوتا تو کوئی چاہت کا ہوتا،

ڈھلتی شام میں میرے سنگ چلتا

اچانک مجھے حیرانی سے دیکھ کر،

ہولے سے میرا ہاتھ دباتا، 

اس حدت سے بھرپور لمس میں

 ایک مان ہوتا کہ میں ساتھ ہوں

میں ساتھ ہوں

آہ کاش__!!

یہ تو میرے اپنے منتشر ذہن کی سوچیں تھی

بوسیدہ خیالات کا جب بھرم ٹوٹا

 تو خیال آیا__!!

کہ میرے خواب خزاں کے ساتھ ساتھ

زرد ہونے لگے ہیں

اس سرد داستاں میں تنہا رہتے

جذبے رایگاں ہونے لگے ہیں

ٹمٹماتے جگنو سو چکے ہیں

کیسا، اداسی کا دور چل پڑا ہے

رائیگانی میں اب وقت کٹتا ہے

میں سوچتی ہوں__!!

کبھی تو سوکھے دریا میں بھی روانی آئے گی

اور پھر ڈھلتی شام__!!

تمہارے آنے کی نوید لائے گی

                                                                                                                                   حنا شہزادی

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -