قتل، حادثات سمیت مختلف واقعات میں 10افراد جاں بحق، دوکی خودکشی 

قتل، حادثات سمیت مختلف واقعات میں 10افراد جاں بحق، دوکی خودکشی 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

 ملتان، کہروڑ پکاراجن پور، ڈہرکی، دھنوٹ،سنانواں (وقائع نگار،تحصیل رپورٹر، نامہ نگار، نمائندہ خصوصی) عید سے تین روز قبل ستار ہوٹل کے سامنے موٹرسائیکل سوار کی ٹکر مارنے سے توں تکرار ہورہی تھی اسی دوران پٹھان آگئے جن کے ساتھ معاملہ توں تکرار سے آگے بڑھ گیا جس سے دونوں فریقین کے درمیان لڑائی ہوئی، نجیب اللہ، اسرار پٹھانوں اور دیگر تین(بقیہ نمبر8صفحہ6پر)
 نامعلوم ملزمان کے تشدد سے بیس سالہ حافظ قران عبدالمنان ولد الطاف احمد وٹو کو شدید چوٹیں ائیں جن کو فوری طور پر ٹی ایچ کیو ہسپتال شفٹ کیا گیا۔ بعدازاں شدید زخموں کی وجہ سے نشتر ہسپتال ملتان شفٹ کیا گیا۔ دودن تک زندگی اور موت کی کشمکش میں مبتلا رہنے کے بعد عید کے روز زندگی کی بازی ہار گیا۔ پولیس نے لاش کا پوسٹ مارٹم کرانے کے بعد نجیب اللہ۔ اسرار احمد پٹھان اور تین نامعلوم ملزم کے خلاف مقدمہ درج کرکے ایک نامزد اور ایک نامعلوم ملزمان کو تحویل میں لے کرکے کاروائی کااغاز کر دیا ہے۔ تاہم ڈی ایس پی حافط غلام فرید خان نے بتایا کہ قتل کے تمام محرکات کا جائزہ لیا جارہا ہے۔ انصاف کے تقاضے پورے کرتے ہوئے کسی کے ساتھ زیادتی نہیں کی جائے گی۔ مظلوم کو مکمل انصاف فراہم کیا جائے گا۔   ڈہرکی کے قریب قومی شاہراہ المرتضی ہوٹل کے مقام پرتیزرفتارکارنے موٹر سائیکل کوٹکرماردی جسکے نتیجے میں موٹر سائیکل ایک نوجوان میر حسن بھٹو موقع پر ہی ہلاک ہو گیا جبکہ دوسرا نوجوان شوکت بھٹو شدید زخمی ہوگیا جسے ڈہرکی ہسپتال منتقل کرنے کے بعد بہتر علاج کیلئے پنجاب کے شہر رحیمیار خان کی ہسپتال منتقل کر دیا گیا ہے ضروری کاروائی کیبعد جاں حق نوجوان کی نعش ورثا کے حوالے کردی گئی ہے واضع رہے کہ دونوں نوجوان ہوٹل پرکام کرتے تھیڈہرکی کے قریب گاں کوٹلولنک روڈ پر دودھ فروخت کرنے والا مزدور الطاف حسین بھمب جب ڈہرکی سیاپنے گھرواپس جارہا تھا توراستے میں نامعلوم مسلح افراد نے موٹر سائیکل چھیننے کی کوشش کی مزاحمت کرنے پر مسلحہ افراد نیفائرنگ کرکیاسے قتل کردیا اور فرار ہوگئے ڈہرکی پولیس ملزمان کو گرفتار کرنیمیں تاحال ناکام ورثہ کاڈی آئی جی سکھر ایس ایس پی گھوٹکی اور دیگر علی حکام سیقاتلوں کی فوری گرفتاری کا مطالبہ کیا ہیبستی داؤ والا موضع جمرانی واہ کے مقامی محمد رمضان ولد فیض بخش قوم درکھان گھر سے باہر گیا اور واپس نہ آیا تلاش کرنے پردوسرے روز اس کی نعش پرانی مسجد میں لٹکی ہوئی ملی۔ اطلاع ملنے پر 1122 اور تھانہ دھنوٹ کی پولیس موقع پر پہنچ گئی۔ضروری کاروائی کے بعد تھانہ دھنوٹ پولیس نے نعش پوسٹ مارٹم کے لئے تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال کہروڑ پکا بھیج دی۔ورثاء نے پولیس کو دیئے گئے بیان میں بتایا کہ محمد رمضان کا دماغی توازن درست نہ ہونے کی بنا پر اس نے خود کشی کی۔ نواحی علاقہ پل داو والا پر موشی حالات سے تنگ 65 سالہ محمد رمضان ولد فیض بخش  سکنہ داو والانے مسجد میں خود کو گلے میں رسی ڈالکر پھانسی دے دی نعش کو ریسکیو 1122 نے نیچے اتارا اور ہسپتال پہنچایا،دوسرے  حادثہ  میں نواحی علاقہ چیلے واہن میں ٹیوب ویل کی مرمت کے دوران سیڑھیوں سے  33 سالہ نوجوان محمد شعیب ولد محمد یوسف  کنویں میں گرگیا اور دم توڑ گیا ریسکیو 1122 نے نعش کو کنویں سے نکال کر ورثا کے حوالے کیا عید اور مرو کے روز موٹر سائیکل کے دو مختلف حادثات میں 2 نوجوان جاں بحق، 4 شدید زخمی، تفصیل کے مطابق پہلے واقعہ میں عید کے روز وہوا کے نواحی قصبہ کوتانی کا رہائشی نہم کلاس کا طالب علم محمد فرحان ولد محمد حنیف اپنے چھوٹے بھائی کے ہمراہ موٹر سائیکل پر سوار ہو کر وہوا آیا اور لتڑا موڑ کے قریب سامنے سے آنے والے تیز رفتار موٹر سائیکل سے اتنی شدت سے ٹکرایا کہ محمد فرحان موقع پر ہی جاں بحق ہوگیا جبکہ اس کا چھوٹا بھائی اور دوسرے موٹر سائیکل پر سوار دو نوجوان شدید زخمی ہوگئے جنہیں فوری طور پر وہوا ہسپتال منتقل کیا گیا دوسرے واقعہ میں عید کے تیسرے دن(مرو) کو وہوا کے نواحی قصبہ لتڑا میں اپنے تختہ داروں کو ملنے کے لیے آنے والے موٹر سائیکل سوار دو نوجوان محمد ریان اور محمد خلیل رشتہ داروں کو ملنے کے بعد واپس اپنے گھر ڈیرہ غازی خان جا رہے تھے کہ راستہ میں انڈس ہائی وے پر تونسہ شریف کے قریب سامنے سے آنے والے تیز رفتار ڈالہ نے انہیں کچل ڈالا جس سے محمد ریان جاں بحق جبکہ محمد خلیل شدید زخمی ہوگیا ہے جسے ٹی ایچ کیو ہسپتال منتقل کر دیا گیا تھانہ مسافر خانہ کی حدود میں کوٹ دادو گھلوع کے علاقہ میں عید کے دوسرے روز مزمل نامی بدبخت شخص نے کھانا جلدی نہ دینے پر فائرنگ کرکے سگی ماں کو قتل کردیا۔گولی خاتون کے چہرے پر لگی جس سے وہ موقع پر جاں بحق ہو گئی۔واقعہ کیاطلاع ملتے ہی تھانہ مسافر خانہ کی پولیس نے موقع پر پہنچ کر ملزمل مزمل کو حراست میں لے کر مقدمہ درج کر تے ہوئے مذید تحقیقات شروع کردی۔نواحی علاقہ موضع نند پور میں دکان پر بیٹھے شخص عبدالرازق ولد نصیر قوم سہو کو موٹر سائیکل پر نامعلوم شخص نے فائرنگ کردی، گو لیاں سینے سمیت جسم کے مختلف حصوں پر لگنے سے عبدالرازق سہو شدید زخمی ہوگیا اورزخموں ککی تاب نہ لاتے موقع پر ہی خالق حقیقی سے جامل،واقعہ کی اطلاع ملتے ہی سرا ئے سدھو جائے وقوعہ پر پہنچ گئی اور نعش قبضہ میں لے کرتحصیل ہیڈ کواٹر ہسپتال میں پوسٹمارٹم کے بعد ورثاء کے حوالے کرتے کاروائی شروع کر دی،  مقتول نوجوان عبدالرزاق کے بھائی اور رشتے داروں نے قتل کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے حکام سے ملزمان کی فوری گرفتاری کا مطالبہ کیا ہے۔عید کے پہلے روز تھانہ نیو ملتان کے علاقہ میں بھتہ نہ دینے پر فائرنگ کرکے ہوٹل مالک کو قتل کردیا گیا ملزم موقع سے فرار ہو گیا جبکہ اسکے ایک ساتھی کو پولیس نے گرفتار کرلیا ہے۔پولیس نے لاش پوسٹ مارٹم کے بعد لواحقین کے حوالے کردی ہے۔تفصیل کے مطابق تھانہ نیو ملتان کے علاقہ چوک کمہارنوالہ پر جاوید نامی شخص نے ہوٹل بنا رکھا ہے جہاں کے عید کے روز داود گجر نامی  مسلح شخص اپنے دو مسلح ساتھیوں ہمراہ ہوٹل پر آیا اور اس سے بھتہ طلب کیاجس پر ان کے مابین تلخ کلامی ہوئی داود نے جاوید پر فائرنگ کردی جسکے نتیجے میں اسکو 8 فائر لگے اور یہ موقع پر جان بحق ہو گیا۔پولیس نے موقع پر پہنچ کر لاش کو تحویل میں لیا اور اسے نشتر ہپستال منتقل کیا گیا پولیس کے مطابق مرکزی ملزم داود گجر فرار ہے جبکہ اسکے ایک ساتھی کو گرفتار کرلیا گیا ہے مرکزی ملزم کی گرفتاری کے لئے چھاپے جاری ہیں جکد گرفتار کرلیا جائے گا۔عید کے پہلے روز تھانہ قطب پور کے علاقہ بابر ٹاون میں دیرینہ دشمنی پر فائرنگ کرکے ایک شخص کو قتل کردیا گیا پولیس نے پوسٹ مارٹم کے بعد لاش لواحقین کے حوالے کردی ہے۔ملزمان کی گرفتاری کے لئے کاروائیاں جا ری ہیں۔پولیس کے مطابق بابر ٹاون میں 40 سالہ نور خان کی اپنے رشتہ داروں اشرف،نذر وغیرہ سے دشمنی چلی آرہی جن کا عید کی شب ایک بار پھر جھگڑا ہوا اور فائرنگ ہوئی نور خان کے پیٹ میں فائر لگے جو نشتر میں دوران علاج دم توڑ گیا۔پولیس نے مقدمہ درج کرکے کاروائی شروع کردی ہے ٹبہ سلطان پور کے نواحی علاقہ چوک میتلا میں ملتان روڈ پر ریلوے پھاٹک کے قریب سڑک کنارے 55سالہ شخص مردہ حالت میں پڑا تھا جس کو دیکھ کر مقامی افراد نے پولیس کو اطلاع کردی پولیس نے لاش تحویل میں لیکر شناخت کے لیے رورل ہیلتھ سنٹر ٹبہ سلطان پور منتقل کی کئی گھنٹے پڑی رہنے مے بعد لاش کی شناخت نہ ہوسکی جس کے بعد بلدیہ اہلکاروں نے لاش کو نماز جنازہ کی ادائگی کے بعد مقامی قبرستان میں سپردخاک کردیا ہے واضع رہے کہ جس جگہ سے لاش ملی ہے اس کے سامنے ایک مل بھی ہے جہاں پر چوبیس گھنٹے عوام کی آمدورفت رہتی ہے مل انتظامیہ تمام صورتحال سے بے خبر ہے مرحوم کے کپڑوں کی حبیب بھی خالی تھی ۔پولیس تھانہ سنانواں نے مقدمہ درج کرکے متعدد ملزمان گرفتار کرلیے۔ بے گناہ شہری کی موت پر شہر بھر میں سوگ کا سماں، تفضیل کیمطابق چاند رات کو سنانواں شہر میدان جنگ بن گیا۔ پی ایس او پمپ کے مقام پر ہونیوالی شدید اور اندھا دھند فائرنگ کے نتیجے میں ایک بے گناہ شہری معظم کلاچی جان کی بازی ہار گیا جبکہ دونوں گروپوں کے 4افراد شدیدزخمی ہوگئے۔ گشکوری برادری اور گرمانی برادری کے نوجوانوں کے مابین کشیدگی پچھلے کچھ ماہ سے جاری تھی۔ چاند رات کو پی ایس او پمپ سنانواں کے مقام پر دونوں گروپ آ منے سامنے آ گئے اور ایک دوسرے پر اندھا دھند فائرنگ شروع کردی۔ جس کے نتیجے میں گرمانی گروپ کے خبیب گرمانی گولیاں لگنے سے زخمی ہوئے جبکہ گشکوری گروپ کے شعیب گشکوری،محمد رف گشکوری گولیاں لگنے سے شدید زخمی ہوئے اور راہگیر معظم کلاچی، محب حسین بلوٹی، قدیر عباس بھٹی بھی فائرنگ کی زد میں آ گئے جن میں معظم کلاچی زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے ہسپتال سنانواں میں دم توڑ گئے۔ فائرنگ کے باعث عوام میں بھگدڑ مچ گئی اور کئی لوگوں نے زمین پر لیٹ کر جان بچائی۔ وقوعہ کی اطلاع ملنے پر مقامی پولیس تھانہ سنانواں موقع پر پہنچی اور زخمیوں کو سنانواں ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں ابتدائی طبی امداد کے بعد نشتر ریفر کر دیاگیا۔ پولیس تھانہ سنانواں کاروائی کرتے ہوئے ملزمان محمد رف گشکوری، محمد آصف گشکوری، محمد شعیب گشکوری، ثنا اللہ عرف سنی گرمانی، اسامہ گرمامی، خبیب گرمانی، فاروق کہاوڑ، سیفل گوراہا، فیاض جام، محمد عامر، صغیر جگلانی، عمران عرف مانی گرمانی پر مقدمہ درج کرکے متعدد ملزمان کو گرفتار کر لیا ہے۔ دریں اثنا مقتول معظم کلاچی کی نماز جنازہ عید کے دن عید گاہ سنانواں میں ادا کی گئی جس میں شہریوں کی کثیر تعداد نے شرکت کی۔ فائرنگ وقوعہ کے باعث عید کے موقع پر شہر بھر کی فضا سوگوار رہی