فوری غیر مشروط جنگ بندی کو یقینی بنایا جائے: اسحاق ڈار

فوری غیر مشروط جنگ بندی کو یقینی بنایا جائے: اسحاق ڈار

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

                                                                        بنجول(مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) پاکستان نے غزہ اور مغربی کنارے میں فلسطینی عوام کے خلاف اسرائیلی فوج کی جاری ظالمانہ کارورائیوں پرگہری تشویش کااظہارکیا ہے جبکہ بھارت سے انسانی حقوق کی تمام خلاف ورزیوں کو روکنے اور حریت رہنماؤں کو رہا کرنے کا مطالبہ کر دیا۔نائب وزیراعظم اور وزیرخارجہ محمد اسحاق ڈار نے گیمبیا میں او آئی سی کی پندرہویں اسلامی سربراہ کانفرنس سے اپنے خطاب میں کہا کہ او آئی سی کے رکن ممالک پرزوردیا کہ وہ فوری اور غیرمشروط جنگ بندی اور محصور فلسطینی عوام کو بلاتعطل انسانی امداد کی فراہمی کیلئے مل کر کام کریں۔انہوں نے فلسطین کو اقوام متحدہ کے مکمل رکن کے طورپر تسلیم کرنے، دو ریاستی حل تسلیم کرنے کیلئے امن عمل کی دوبارہ بحالی اور 1967 سے پہلے کی سرحدوں کی بنیاد پر ایک ایسی آزاد اور خودمختار فلسطینی ریاست کے قیام کیلئے پاکستان کی حمایت کا اظہارکیا جس کا دارالحکومت القدس الشریف ہو۔نائب وزیراعظم نے بھارت کے غیرقانونی زیر قبضہ جموں وکشمیر میں بھارتی مظالم خصوصاً پانچ اگست 2019ء  کے غیرقانونی اور یکطرفہ اقدامات کا حوالہ دیتے ہوئے او آئی سی پرزوردیا کہ وہ جموں وکشمیر پرلائحہ عمل کو بروئے کار لائے۔،انہوں نے کہا کہ او آئی سی کا یہ سربراہی اجلاس ایک نازک موڑ پر منعقد ہو رہا ہیدنیا کے عوام بالخصوص امت مسلمہ کو بہت بڑے چیلنجز کا سامنا ہے جن کے لیے او آئی سی کو متحد اور مربوط جواب دینا چاہیے۔یہ سربراہی اجلاس غزہ اور مغربی کنارے میں فلسطینی عوام کے خلاف اسرائیل کے جاری وحشیانہ فوجی حملوں کے سیاہ سائے میں منعقد ہو رہا ہے، 35 ہزار سے زائد فلسطینی شہری، جن میں زیادہ تر خواتین اور بچے شامل ہیں، مارے جا چکے ہیں،ہزاروں زخمی اور اسرائیل کی اندھا دھند بمباری سے بیس لاکھ لوگ بے گھر ہوئے، جان بوجھ کر انسانی امداد سے انکار کیا جا رہا ہے، بین الاقوامی عدالت انصاف (آئی سی جے) نے اسے ”قابل تعظیم نسل کشی“ قرار دیا ہے،انہوں نے مزید کہا کہ گزشتہ نومبر میں ریاض میں ہونے والی مشترکہ عرب اسلامی سربراہی کانفرنس نے دور رس فیصلے کیے تھے، اس سربراہی اجلاس میں ہمیں فلسطین کی آزادی کے لیے اپنے مقاصد کو عملی جامہ پہنانے کے لیے متحرک ہونا چاہیے، فوری اور غیر مشروط جنگ بندی کو یقینی بنایا جائے،محصور لوگوں کے لیے بلا روک ٹوک انسانی امداد کو یقینی بنایا جائے، تنازعات کے پھیلاؤ کو روکا جائے، اقوام متحدہ کے مکمل رکن کے طور پر فلسطین کے داخلے کی حمایت جاری رکھیں، اسحاق ڈارکا کہنا تھا کہ جنوبی ایشیا میں امن و سلامتی کے لیے جموں و کشمیر کے تنازع کا حل بھی ضروری ہے،، گستاخانہ، اسلام مخالف اور اسلام فوبک مواد کے لیے مواد کے ضابطے کی پالیسیوں کے اطلاق کو ہم آہنگ کیا جائے، او آئی سی کی طرف سے ایک مشترکہ قرارداد کو اپنانے کی تجویز پیش کش کرتے ہوئے کہا کہ میں واضح طور پر او آئی سی میں ایک مرکزی رابطہ گروپ کے ذریعے ان عالمی کارپوریٹس کے ساتھ مشغول ہونے کا طریقہ کار وضع کیا جائے، قرارداد میں او آئی سی کے اراکین کی جانب سے معیاری پالیسی اقدامات کا ایک مجموعہ بھی شامل ہونا چاہیے،ہمیں اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل اور اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی کے ساتھ مل کر اسلامو فوبیا سے نمٹنے کے لیے ایک ایکشن پلان تیار کرنے کے لیے کام کرنا چاہیے،، ہمیں اجتماعی طور پر موسمیاتی تبدیلی کے وجودی خطرے سے نمٹنا چاہیے، 2022 میں پاکستان میں تباہ کن سیلابوں میں واضح ہے جس سے 34 بلین امریکی ڈالر کا نقصان ہوا ہے، ترقی یافتہ ممالک کو مشترکہ لیکن تفریق شدہ ذمہ داریوں (CBDR) کے اصول کے مطابق مناسب مالیات، ٹیکنالوجی اور صلاحیت سازی میں مدد فراہم کرنے کے لیے اپنے وعدوں کو پورا کرنا چاہیے، پاکستان اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی دو سالہ مدت کے لیے غیر مستقل نشست کا امیدوار ہے،ہمیں او آئی سی کے تمام رکن ممالک کی فعال حمایت کا یقین ہے، اسحاق ڈارکا مزید کہنا تھا کہ ہم اپنی سلامتی کونسل کی اصطلاح کو OIC کی ایک اہم آواز کے طور پر استعمال کرنے کے منتظر ہیں،وزیر خارجہ محمد اسحاق ڈار کی گیمبیا کے صدر سے دو طرفہ ملاقات ہوئی۔ترجمان کے مطابق وزیر خارجہ نے صدر بیرو کو او آئی سی سربراہی اجلاس کے کامیاب انعقاد پر مبارکباد دی، وزیر خارجہ نے حقیقت کو سراہا کہ گیمبیا نے او آئی سی سربراہی اجلاس کے پلیٹ فارم سے اسلاموفوبیا کے نازک مسئلے کو اجاگر کیا ہینائب وزیراعظم اور وزیر خارجہ سینیٹر محمد اسحاق ڈار نے گیمبیا کے شہر بنجول میں 15ویں او آئی سی اسلامی سربراہی کانفرنس کے موقع پر ترک وزیر خارجہ ہاکان فیدان سے ملاقات کی ہے۔ ملاقات میں پاکستان اور ترکیہ نے اقتصادی، تجارتی اور دفاعی شعبوں پر خصوصی توجہ کے ساتھ دوطرفہ تعاون کو مزید گہرا کرنے کے عزم کا اعادہ کیا ہیپاکستان اور چین نے چین پاکستان اقتصادی راہداری (سی پیک) منصوبوں پر تعاون کو مزید بڑھانے اور اپ گریڈ کرنے کے عزم کا اظہار کیا۔دفتر خارجہ کی جانب سے جاری بیان کے مطابق وزیر خارجہ اسحٰق ڈار اور چین کی نیشنل پیپلز کانگریس کی قائمہ کمیٹی کے وائس چیئرمین زینگ جیان بینگ کی گیمبیا میں اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کی 15ویں اسلامی سربراہی کانفرنس کے موقع پر ملاقات ہوئی۔دفتر خارجہ نے کہا کہ دونوں فریقوں نے باہمی فائدے کے لیے قریبی اقتصادی تعاون کے ذریعے اپنے تعلقات کو مضبوط بنانے کی اہمیت پر زور دیا۔دونوں فریقین نے پاکستان اور چین کے درمیان پائیدار تعاون پر مبنی شراکت داری کی بھی توثیق کی اور پاکستان کی پارلیمنٹ اور چین کی نیشنل پیپلز کانگریس کے درمیان بڑھتے ہوئے تبادلوں پر تبادلہ خیال کیا۔

اسحاق ڈار

مزید :

صفحہ اول -