کریک ڈان اور ہر جگہ ناکہ بندی اور تلاشیوں کی کارروائیوں کا سلسلہ تیز

کریک ڈان اور ہر جگہ ناکہ بندی اور تلاشیوں کی کارروائیوں کا سلسلہ تیز

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


سری نگر(کے پی آئی) کل جماعتی حریت کانفرنس (ع) کے ترجمان نے کہا ہے کہ حریت کی طرف سے 6نومبر کو شہدائے جموں کی یاد میں مرکزی جامع مسجد سرینگر میں ہونے والے جلسہ خراج عقیدت اور کشمیر کی جملہ مزاحمتی قیادت کی جانب سے بھارت کے وزیراعظم نریندر مودی کے دورے کے موقعہ پر ملین مارچ کے پروگرام کو ناکام بنانے کیلئے حریت قیادت اور کارکنان کیخلاف وسیع پیمانے پر کریک ڈان اور ہر جگہ ناکہ بندی اور تلاشیوں کی کارروائیوں کا سلسلہ تیز کرکے پورے کشمیر کو ایک بڑے جیل خانے میں تبدیل کردیا گیا ہے ۔ترجمان نے کہا کہ ریاستی حکومت جس شدت کے ساتھ کشمیر میں ہندوتوا کے ایجنڈے کو عملانے کیلئے سرگرم عمل نظر آرہی ہے اور وزیراعظم نریندر مودی کی قصیدہ خوانی میں لگی ہوئی ہے وہ اس حقیقت کو آشکار کرتی ہے کہ کس طرح یہ لوگ ہوس اقتدار میں شاہ سے زیادہ وفادار بن کر کشمیری عوام کے جذبات اور احساسات کو کچلنے سے دریغ نہیں کرسکتے۔ترجمان نے کشمیری عوام کو کشمیر سے متعلق پی ڈی پی کے ایجنڈے سے خبردار رہنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ آر ایس ایس کے کشمیر دشمن ایجنڈے کو عملانے کیلئے یہ لوگ کسی بھی حد کو پار کرنے کیلئے تیار ہیں اور ریاستی وزیراعلی مفتی محمد سعید کی بھارت کے وزیراعظم سے متعلق بیانات یہ حقیقت سمجھنے کیلئے کافی ہیں کہ ان کو اصل میں آر ایس ایس کے کشمیر دشمن ایجنڈے کو عملانے کیلئے ہی مسند اقتدار پر بٹھایا گیا ہے۔
ترجمان نے کہا کہ وزیراعظم کو یہ حقیقت تسلیم کر لینی چاہئے کہ گزشتہ 70 برسوں کے دوران بھی مسئلہ کشمیر کی حساسیت اور ہیئت کو اقتصادی پیکیجوں کے سہارے متاثر نہیں کیا جاسکا ہے اور آئندہ بھی اس قسم کا عمل سودمند ثابت نہیں ہوسکتا۔جموں وکشمیر ایک متنازعہ خطہ ہے جس کو کشمیری عوام کی خواہشات کے مطابق اور اقوام متحدہ کی قراردادوں کی روشنی میں یا بھارت اور پاکستان اور کشمیری عوام کے درمیان بامعنی سہ فریقی مذاکرات سے ہی حل کیا جاسکتا ہے ۔ ترجمان نے کہاکہ کشمیریوں کو اقتصادی مراعات کی بنیاد پر بہلانے کا سلسلہ 1947سے جاری ہے تاہم مسئلہ کشمیر ایک زندہ حقیقت کی طرح اپنی جگہ موجود ہے اور وقت آگیا ہے کہ اس انسانی اور سیاسی مسئلہ کو حل کرنے کیلئے سیاسی جراتمندی سے عبارت اقدامات کئے جائیں۔

مزید :

عالمی منظر -