پولیس افسران کے رویہ سے تنگ ایک اور تھانیدار کی سروس ریوالور سے خود کشی

پولیس افسران کے رویہ سے تنگ ایک اور تھانیدار کی سروس ریوالور سے خود کشی
پولیس افسران کے رویہ سے تنگ ایک اور تھانیدار کی سروس ریوالور سے خود کشی

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

 لاہور(کرائم سیل) پولیس افسران کے رویہ سے تنگ ایک اور تھانیدار کی خودکشی ۔ 15دنوں میں 2مختلف تھانوں میں دوسرا افسوسناک واقعہ۔ پولیس اہلکاروں نے متوفی کی نعش کو پوسٹ مارٹم کے لیے مردہ خانہ میں جمع کروا کے کارروائی کا آغاز کر دیا ہے ۔پولیس اور متوفی کے لواحقین کے مطابق 28سالہ محمد زبیر خالد تھانہ گلبرگ میں تعینات تھا اور وہ ایک نفسیاتی مرض کاشکار تھا ۔ساتھی اہلکاروں کے مطابق متوفی کو آج اپنے سینئر کی جانب سے کسی معاملہ میں ڈانٹ پڑی تھی جس پر وہ شدید دلبرداشتہ تھا اور اس نے شام کے وقت تھانہ کے ایک کمرے میں جا کر اپنے سروس ریوالور سے خود کو کنپٹی پرگولی مار کر شدید زخمی کر دیا۔زخمی کو فوری طور پر قریبی ہسپتال میں طبی امداد کے لیے منتقل کیا جارہاتھاکہ وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے راستے میں ہی دم توڑ گیا ۔اطلاع ملنے پر پولیس کے اعلیٰ افسران موقع پر پہنچ گئے اور انہوں نے جائے وقوعہ کا معائنہ کیا جبکہ آئی جی پنجاب نے واقع کا نوٹس لیتے ہوئے رپورٹ طلب کر لی ہے۔ یاد رہے کہ چند روز قبل تھانہ ڈیفنس اے میں تعینات تھانیدار نے بھی اعلیٰ افسران کی ڈانٹ ڈپٹ سے تنگ آ کر خودکشی کر لی تھی ۔البتہ اس حوالے سے پولیس افسران کا کہنا تھا کہ متوفی اے ایس آئی زبیر خالد ایک نفسیاتی بیماری جسے سائیکیٹرک ڈس آرڈر کہتے ہیں کا شکار تھا اور اس کاشاہ جمال میں واقع ایک نجی کلینک میں علاج بھی چل رہا تھا اور اس نے اسی نفسیاتی بیماری کا شکار ہو کر خودکشی کی ہے ۔متوفی کی چند سال قبل شادی ہوئی تھی اور اس کے دو بچے ہیں۔

مزید :

علاقائی -