ڈیرہ : میئر شپ بچ گئی ، عبد العلیم شاہ کا قانونی جنگ لڑنے کا اعلان

ڈیرہ : میئر شپ بچ گئی ، عبد العلیم شاہ کا قانونی جنگ لڑنے کا اعلان

ڈیرہ غازیخان (بیورو رپورٹ ‘نمائندہ خصوصی) میونسپل کارپوریشن ڈیرہ غازیخان کے میئر اور ڈپٹی میئر کے خلاف تحریک عدم اعتماد ، محرک تحریک ممبران کی مقررہ وقت پر اجلاس میں شریک نہ ہونے پر ناکام قرار دے دی گئی۔ تحریک عدم اعتمادپیش کرنے والے ارکان کا شدید احتجاج و نعرہ بازی ،تفصیل(بقیہ نمبر11صفحہ12پر )

کے مطابق پریذائیڈنگ افیسر نے گیارہ بجے اجلاس کی کاروائی شروع کی، ہاؤس میں قائد ایوان شاہد حمید خان چانڈیہ موجود تھے،پریذائیڈنگ آفیسر ڈائریکٹر لوکل گورنمنٹ ملک رفیق کی جانب سے باہر موجود ممبران کواجلاس کی کاروائی میں شامل ہونے کے لیے تین بار پکار کر بلایا گیا اس دوران کوئی ممبر اجلاس میں نہ پہنچا۔ گیارہ بجکر دس منٹ میں پریزائڈنگ آفیسر نے کاروائی کو کلوز کرتے ہوئے اعلان کرتے ہوئے میئر شاہد حمید خان چانڈیہ کے خلاف عدم اعتماد کو ناکام قرار دے دیا۔ریکوزیشن جمع کرانے والے ممبران میں سے تحریک عدم اعتماد کے حق میں ووٹنگ کے لیے تجویز کنند ہ اور تائید کنندہ کے طور پر کوئی ممبر پیش نہ ہوا اور گنتی کی نوبت نہ آئی، اس موقع پر،پریزائڈنگ آفیسر نے تحریک عدم اعتماد ناکام ہونے کا میڈیا کے سامنے بھی اعلان کیا۔ قبل ازیں پریذائیڈنگ آفیسر نے عدم اعتماد کی کاروائی کے طریقہ کار سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ 18ممبران نے ریکوزیشن جمع کرائی تھی جس پر اجلاس کی تاریخ اور وقت مقرر کیا گیا تھا آج ووٹنگ کے لیے اجلاس ان کی زیر نگرانی ہورہا ہے اگر کوئی ممبر میونسپل کارپوریشن تحریک کے حق میں تائید کنندہ اور تجویز کنندہ ہے تو وہ اجلاس میں حاضر ہو اور اپنا نام پیش کرسکتا ہے۔ قائد ایوان میئر شاہد حمید خان چانڈیہ جوکہ ایوان میں موجود تھے انہیں بھی موقع دیا گیا کہ وہ اپنی تائید کے لیے اور صفائی کے لیے اپنا تحریری یا ہاؤس میں کھڑے ہوکر بیان دے سکتے ہیں شاہد حمید خان چانڈیہ نے اس موقع پر کہا کہ ان کے خلاف عدم اعتماد لانے والے ممبران کو حق حاصل ہے کہ وہ ووٹنگ کرالیں لیکن اس کی نوبت نہ آئی۔ دو سری طرف ڈپٹی میئر شیخ اسرار احمد کے خلاف بھی ٹھیک ایک بجے دوبارہ ووٹنگ کے لیے اجلاس ہوا یہاں بھی ریکوززیشن کے حامل ممبران غیر حاضر تھے جس پریذائیڈنگ آفیسر ملک رفیق نے ڈپٹی میئر شیخ اسرار احمد کے خلاف بھی عدم اعتماد کو ناکام قرار دے دیا۔ میئر شاہد حمید خان چانڈیہ کے خلاف عدم اعتماد کی کاروائی دس منٹ میں جبکہ ڈپٹی میئر شیخ اسرار احمد کے خلاف عدم اعتماد کی کاروائی بیس منٹ تک جاری رہی۔ میئر شاہد حمید ایوان میں موجود اور ڈپٹی میئر شیخ اسرار احمد اس موقع پرایوان میں موجود نہیں تھے۔میئر شاہد حمید خان چانڈیہ اور ڈپٹی میئر شیخ اسرار احمد کے خلاف ایوان کے ٹوٹل 27 ممبران میں سے 18 ممبران ریکوزیشن جمع کرائی جن میں عمران حمید سنامی لیبر ممبر،ثمینہ سرور،طیبہ عزیز، زاہدہ قریشی، سلمیٰ زارا فیمیل ممبر، سلیم الیاس اقلیتی ممبر، خالد بلال سکھانی لیبر ممبر، سید محمد عمران شاہ ٹیکنو کریٹ ممبر، اللہ ڈتہ بھمبھانی چیئرمین یو سی نمبر 1، ملک خالد محمود چیئرمین یو سی 3، سید دلاور حسین شاہ چیئرمین یو سی نمبر 5، محمد سرورصدیقی چیئرمین یو سی 8، ابصار لودھی چیئرمین یونین کونسل، ظفر طاہر مستوئی یو سی چیئرمین 11، ملک فہیم امجد چیئرمین یو سی 12، شاہد مشتاق خان بغلانی چیئرمین یوسی 15، میان سلطان محمد ڈاہا چیئرمین یوسی 16، ناظم الدین بزدار یو سی چیئرمین 17شامل تھے۔ میئر گروپ اور اس کے مخالف گروپ اپنی اپنی کامیابی کے لیے سرگرداں رہے اور اس دوران ممبران بھی منظر سے غائب رہے ہیں ووٹنگ والے روز (گزشتہ کل)ریکوزیشن جمع کرانے والے ممبران جن کی تعداد 18 تھی میونسپل کارپویشن کے جناح ہال کے باہر ٹھیک ساڑھے دس بجے 18 میں سے 16 ممبران پہنچ گئے مزید دو ممبران ابصار لودھی،محترمہ ثمینہ سرور نہ پہنچے اس دوران ان دو ممبران کا مزید انتظار نہ کیا گیا اور ریکوزیشن کے حامل ممبران ٹھیک گیارہ بج کر گیارہ منٹ پر جناح ہال میں داخل ہوئے اور کاروائی کا حصہ بننے کے لیے حاضری لگانے کی استدعا کی پریذائیڈنگ آفیسر ملک رفیق نے موقف اختیار کیا کہ اجلاس کا وقت پہلے سے طے شدہ تھا اور مقررہ وقت پر وہ بطورپریزائڈنگ کاروائی شروع کراچکے تھے اور ریکوزیشن دینے والے ممبران کو تین بارپکاریں دی گئیں لیکن آپ میں سے کوئی اندر اجلاس کے مقام پر نہ آیا اور نہ ہی کوئی تحریری درخواست دی کہ اجلاس کچھ وقت کے لیے آگے کیا جائے بار بار پکار کے باوجود تحریک عدم اعتماد کے خلاف تجویز کنندہ اور تائید کنندہ کوئی ممبر پیش نہیں ہوا، لہذا تحریک عدم اعتماد ناکام ہوچکی ہے اب ٹھیک ایک بجے ڈپٹی میئر شیخ اسرار احمد کے خلاف عدم اعتماد کی کاروائی کے لیے اجلاس ہوگا آپ اس کے لیے انتظار کریں۔ ریکوزیشن دینے والے ممبران میں شامل ملک فہیم امجد، میاں سلطان ڈاھا، ملک خالد ارائیں مسز طیبہ عزیز سید عمران شاہ و دیگر نے پریذائیڈنگ آفیسر ملک رفیق سے استدعا کی کہ وہ اجلاس کی کاروائی کو دوبارہ شروع کریں لیکن پریذائیڈنگ نہ مانے اس موقع پر ملک فہیم امجد، میاں سلطان ڈاھا سید عمران شاہ سمیت دیگر ممبران ریکوزیشن کے حامل نے شدید احتجاج کیا اور نعرے بازی بھی کی اور اگلے اجلاس جس میں ڈپٹی میئر کے خلاف کاورائی عدم اعتماد کی کاروائی ہونی تھی کا بائیکاٹ کیا۔ بعدا زاں باہر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے ریکوزیشن دینے والے ممبران نے کہا کہ پریذائیڈنگ آفیسر نے اپنی مرضی کے قوائد بنا ڈالے ہیں اور میئر سمیت ڈپٹی میئرکوفائدہ پہنچانے کے لیے ٹھیک گیارہ بجے ہال کے دروازے بند کرادیئے جبکہ وہ کاروائی کا حصہ بننا چاہتے تھے انہوں نے الزام لگایا کہ میئر شاہد حمید خان چاندیہ نے غیر ممبران چند افراد فساد کے لیے بلارکھے تھے جنہوں نے ہمیں بروقت گیارہ بجے اندر آنے میں رکاؤٹ ڈالی انہوں نے کہا کہ میئر گروپ کو سپورٹ کرنے والے سنیٹر حافظ عبدالکریم اورپی ٹی آئی ممبر صوبائی اسمبلی حنیف پتافی نے ہمارے ممبران کووفاداری تبدیل کرنے لیے ہمہ قسم کا دباؤ ڈا لا ۔انہوں نے کہا کہ شہری اتحاد گروپ کی جانب سے دی کی ریکوزیشن اور عدم اعتماد ناکام نہیں ہوئی بلکہ دھونس دھاندلی اور جبرو تسلط سے کوشش کی گئی کہ تحریک عدم اعتماد پیش نہ ہو۔ انہوں نے کہا کہ شہر کی حالت زار کا سب کو پتہ ہے میئر اور ڈپٹی میئر دونوں نااہل ہیں اور ممبران کی اکثریت کی حمایت سے محروم ہیں انہوں نے کہا صرف ایک ہفتہ قبل کارپوریشن کو پچاس لاکھ سے زائد کی آمدن برائے نقشہ فیس ہوئی ہے وسائل کا مسئلہ نہیں ہے یہ لوگ شہر کی تعمیر و ترقی کے لیے مخلص نہیں ہیں۔ انہوں نے کہا آج جو کچھ ہوا س کو عدالت سمیت تمام فورم پر چیلنچ کیا جائے گا۔ دوسری طرف میئر شاہد حمید خان چانڈیہ نے ریکوزیشن دینے والے ممبران کے تمام الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ وہ ایوان میں موجود تھے میرے اور ڈپٹی میئر کے خلاف ریکوزیشن انہوں نے دی اور آج عدم اعتماد لانا تھا لیکن وہ کامیاب نہیں ہوسکے اور اپنی ناکامی کو بے بنیاد الزام کی آڑ میں چھپارہے ہیں انہوں نے کہا شہر کی تعمیر ترقی میں انہوں نے کوئی کسر اٹھا باقی نہیں رکھی موجودہ وسائل میں بہت کچھ ہوا ہے انہوں نے کہا کہ ممبران کی اکثریت کاان پر اعتماد ہے جس کا منہ بولتا ثبوت آج کی عدم اعتماد کی ناکامی ہے۔ادھر ڈیرہ غازیخان میں اختیارات کے حصول کی جنگ تحریک عدم اعتماد کی کامیابی اور ناکامی کیلئے فریقین کا اپنا اپنا موقف سامنے آیا ہے ۔مسلم لیگ ن کے میئر شاہد حمید خان چانڈیہ کے خلاف تحریک عدم اعتماد ناکام بنانے کیلئے مقامی سطح پر پی ٹی آئی ،کھوسہ گروپ اور نوازلیگ کے سابق وفاقی وزیر کا گٹھ جوڑ مسلم لیگ ن کے سابق ممبر صوبائی اسمبلی سید عبدالعلیم شاہ نے قانونی جنگ لڑنے کا اعلان کردیا۔پرائذیڈنگ آفیسر ملک محمد رفیق نے رولز کے مطابق اجلاس کا انعقاد کرنے کی بجائے بے اصولی سے اجلاس منعقد کرائے بغیر تحریک عدم اعتماد کی ناکامی کا اعلان کردیا ۔تحریک عدم اعتماد والے اجلاس کے مقررہ وقت پر نہیں آئے ۔ادھر سابق ممبر صوبائی اسمبلی سید عبدالعلیم شاہ نے کہا کہ پریذائڈنگ آفیسر ملک محمد رفیق کورولز کے مطابق اجلاس منعقد کراکے تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ کرانی چاہیے تھی ۔لیکن رولز کو بائی پاس کرکے انہوں نے اعلان کردیاکہ مقررہ وقت پر ممبران نہیں آئے جبکہ مقامی سطح پر پی ٹی آئی ممبران اسمبلی ،کھوسہ گروپ بھی تحریک عدم اعتماد کو ناکام بنانے کیلئے گٹھ جوڑ کیے ہوئے تھے ۔آج شہر کی خراب حالت کے ذمہ دار یہ سب لوگ ہیں ۔میونسپل کارپوریشن ،ڈیرہ غازیخان کی کارکردگی سوالیہ نشان بنی ہوئی ہے ۔انہوں نے کہا کہ تمام معاملات کو چیلنج کرینگے اور ہر قانونی راستہ اختیار کرینگے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر