کوٹ اسلام ‘ عبدالحکیم ہسپتال میں غلط آپریشن ‘ خاتون کی حالت نازک ‘ ورثا سراپا احتجاج

کوٹ اسلام ‘ عبدالحکیم ہسپتال میں غلط آپریشن ‘ خاتون کی حالت نازک ‘ ورثا ...

کوٹ اسلام(نمائندہ پاکستان) موضع جلہ پہوڑ کے رہائشی محنت کش ٹکا خان آصف ولد سلطان قوم پہوڑ نے صحافیوں کو بتایا کہ میری حاملہ بیوی تھی کو لیڈی ڈاکٹر خدیجہ عمر سے چیک اپ کروانے کی غرض سے وڑائچ ہسپتال عبدالحکیم لایا ،ڈاکٹر کی سیٹ پر بیٹھی خاتون جس کا بعد میں پتہ چلا کہ وہ ڈاکٹر (بقیہ نمبر19صفحہ12پر )

خدیجہ عمر نہیں بلکہ سمیرا نامی ایل ایچ وی ہے نے چیک اپ کیا اور الٹرا ساؤنڈ کیے بغیر فون کر کے ڈاکٹر عمر عمیر کو بلا لیا ،ڈاکٹر عمر عمیر نے آتے ہی مجھ سے کہا کہ تمہاری بیوی ڈلیوری آپریشن بے حد ضروری ہے جس پر میں نے باقی ڈاکٹرز کی رپورٹس دکھاتے ہوئے کہا کہ ان کے مطابق تو ابھی ڈیڑھ ماہ باقی ہے ،مگر ڈاکٹر نیکہا ڈاکٹر ہم ہیں یا آپ ،آپریشن ابھی کرنا ہو گا ،میری بیوی کو آپریشن تھیٹر لے جا یا گیا ،کافی وقت گزرنے کے بعد ڈاکٹر کا اسسٹنٹ باہر آیا اور اس نے بتایا کہ تمہارا بیٹا پیدا ہوا ہے مگر تمہاری بیوی حالت نازک ہے بلڈ کا انتظام کرو ،جس پر نے آہ و بکا کی کہ ایسا ظلم کیوں کیا تو ڈاکٹر نے باہر آکر مجھے ڈانٹنا شروع کردیا اور کہا کہ ہم نے جو کیا ہے ٹھیک کیا ہے،ہسپتال کا ماحول خراب مت کرو ۔کچھ دیر کے بعد ڈاکٹر نے کہا کہ تمہارا مریض سیریس ہے،ایمبولینس منگواؤ اور اسے نشتر ہسپتال لے جاؤ ،نشتر میں مجھے بتایا گیا کہ آپریشن کے دوران اناڑی پن کا مظاہرہ کرتے ہوئے خاتون کے اندرونی سسٹم میں جگہ جگہ کٹ لگے ہوئے ہیں ، اور گردے کی وین کو بھی نقصان پہنچا ہے ،دوبارہ آپریٹ کرنا پڑے گا ،نشتر ہسپتال کے ڈاکٹرز نے دوبارہ آپریشن کیا مگر تاحال میری بیوی موت و حیات کی کشمکش میں ہے ۔متاثرہ خاتون کے شوہر ٹکا خان آصف کا مزید کہنا تھا کہ ہماری اس سے پہلے ایک ہی بیٹی ہے جس کی عمر 3 سال ہے ،وڑائچ ہسپتال کے ڈاکٹر عمر عمیر اور ایل ایچ وی کی مجرمانہ غفلت نے نہ صرف ہم سے ہمارا بیٹا چھین لیا بلکہ میری بیوی ہمیشہ کے لیے ماں بننے سے ہی محروم ہو گئی ۔متاثرہ خاندان نے چیف جسٹس آف پاکستان ،وزیر اعلیٰ پنجاب سے مذکورہ ڈاکٹر اور ایل ایچ وی کے خلاف قانونی کاروائی کی اپیل کی ہے ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر