حکومت کی بس دلدل  میں پھنس چکی، فیصلے صدارتی آریڈیننس سے کئے جا رہے ہیں: سراج الحق 

حکومت کی بس دلدل  میں پھنس چکی، فیصلے صدارتی آریڈیننس سے کئے جا رہے ہیں: سراج ...

  



اسلام آباد (این این آئی)امیرجماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ حکومت کی بس دلدل  میں پھنس چکی ہے۔حکومت کے غلط اقدامات اور رویے کی وجہ سے سیاست اور جمہوریت بند گلی میں ہے۔ اسلام آباد لاوارث شہر اور حکومت خود محصور ہوگئی ہے۔ سینیٹ اور قومی اسمبلی موجود ہے مگر اپنے فیصلے صدارتی آرڈیننس سے کئے جاتے ہیں۔حکومت آمریت کی طرح منتخب ایوان کو کوئی اہمیت نہیں دے رہی۔وزیراعظم نے وعدہ کیا تھا کہ احتجاج کے لیے آنے والوں کو کنٹینر بھی دیں گے اور کھانا بھی کھلائیں گے۔مگر لوگ شدید سردی میں بیٹھے ہیں نہ انہیں کھانا دیا جارہا ہے اور نہ کوئی رضائیوں کا انتظام ہے۔حکومت کم از کم اپنے کسی ایک وعدے کو تو پورا کرے تاکہ ریکارڈ پہ آجائے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے سینیٹ اجلاس میں شرکت کے بعد پارلیمنٹ کے سامنے میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔سینیٹرسراج الحق نے کہا کہ وزراء کے بیانات سے ظاہر ہوتا ہے کہ حکومت خود نہیں چاہتی کہ حالات میں بہتری آئے۔حکومت گردوغبار میں گم رہ کر وقت پاس کررہی ہے۔حکومتی وزراء کے بیانات آگ پر پانی ڈالنے کی بجائے تیل ڈال رہے ہیں۔جن سے اشتعال میں مزید اضافہ ہورہا ہے۔انہوں نے کہا ہم نے ہمیشہ مذاکرات کی حمایت کی ہے۔اب بھی حکومت سے کہتا ہوں کہ سنجیدگی سے لوگوں کی بات سنے۔حکومت کی پالیسیوں کی وجہ سے عوام پریشان ہے۔انہوں نے کہا اب وقت آگیا ہے کہ حکومت آئینہ دیکھ کر اپنے چہرے پر لگے داغ صاف کرے۔ سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ حکومت بے وقعت ہوکر رہ گئی ہے۔حکومت کی اہمیت ختم ہوچکی ہے۔

سراج الحق

مزید : صفحہ آخر