ڈیوس کپ کی پاکستان سے منتقلی کا فیصلہ جانبدارانہ ہے، اعصام الحق

    ڈیوس کپ کی پاکستان سے منتقلی کا فیصلہ جانبدارانہ ہے، اعصام الحق

  



لاہور (سپورٹس رپورٹر) پاکستان کے نامور ٹینس اسٹار اعصام الحق نے بھارت کے خلاف ڈیوس کپ میچز کی پاکستان سے منتقلی کے فیصلے پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے اسے متعصب اور جانبدارانہ فیصلہ قرار دے دیا۔ اعصام الحق کا کہنا ہے کہ میں اس فیصلے سے بہت زیادہ مایوس ہوں، ہمارے ساتھ امتیازی سلوک کیا جا رہا ہے اور ایسے جرم کی سزا دی جا رہی ہے جو ہم نے کیا ہی نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ میں بھارت کے خلاف ڈیوس کپ میچز کے پاکستان میں انعقاد کے حوالے سے بہت پرجوش تھا کیونکہ اس کے ذریعے ہم دنیا کو بہت مثبت پیغام بھیجتے اور اپنے ملک کی اچھی تصویر پیش کر سکتے تھے لیکن مجھے سمجھ نہیں آ رہی کہ انٹرنیشنل ٹینس فیڈریشن نے یہ فیصلہ کیوں اور کس بنیاد پر کیا؟ٹینس اسٹار نے کہا کہ ابھی سری لنکن کرکٹ ٹیم پاکستان سے گئی ہے، اس سیریز کا انتہائی پرامن انداز میں انعقاد کیا گیا، برطانوی شاہی جوڑا بھی یہاں 5 سے 6 دن رہا اور پاکستان سے خوشگوار یادوں کے ساتھ واپس لوٹا جبکہ ابھی بنگلہ دیش کی خواتین کرکٹ ٹیم بھی آئی ہوئی ہے جس سے ثابت ہوتا ہے کہ سب کچھ اچھا چل رہا ہے لیکن اس کے باوجود یہ فیصلہ سمجھ سے بالاتر ہے۔

انہوں نے میچز کی پاکستان سے منتقلی کو غلط فیصلہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس سے پاکستان میں ٹینس کے مستقبل اور اسپورٹس کلچر پر منفی اثرات مرتب ہوں گے۔بات کو جاری رکھتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ آج بھارت نے ہمارے ساتھ یہ کیا ہے، کل کو کوئی دوسرا ملک بھی کہہ سکتا ہے کہ ہم پاکستان نہیں آنا چاہتے تو ہم اس وقت کیا کریں گے؟اس موقع پر اعصام الحق نے انٹرنیشنل ٹینس فیڈریشن کے اس فیصلے کے خلاف احتجاج کرنے کا مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ ہمیں اس امتیازی سلوک کے خلاف بحیثیت قوم مل کر آواز بلند کرنی چاہیے اور عالمی برادری کو بتانا چاہیے کہ ہمارے ساتھ غلط ہو رہا ہے۔

دوکالم

مزید : کھیل اور کھلاڑی