کوہاٹ،اندھے قتل کا ڈراپ سین،بیٹاقاتل نکلا

    کوہاٹ،اندھے قتل کا ڈراپ سین،بیٹاقاتل نکلا

  



کوھاٹ (بیورو رپورٹ) کوہاٹ شکردرہ پولیس نے اندھے قتل کا سراغ لگاکر باپ کے خون سے ہاتھ رنگنے والے بیٹے کو گرفتار کرلیا ہے۔پولیس نے واردات میں استعمال ہونیوالا آلہ قتل کلاشنکوف بھی برآمد کرکے قبضے میں لے لیا ہے۔ابتدائی پوچھ گچھ میں ملزم نے اعتراف جرم کرتے ہوئے تمام راز اگل دئیے ہیں۔پولیس ذرائع کے مطابق29اکتوبر کی شب کوہاٹ کے نواحی قصبہ شکردرہ کے موضع گریوان میں مقامی باشندے بہادر خان ولد قادر خان کوگھر کے اندر فائرنگ کرکے موت کے گھاٹ اتار دیا گیا تھا۔اندھے قتل کی اس واردات کا مقدمہ مقتول کی والدہ حواء بی بی کی مدعیت میں نامعلوم ملزمان کے خلاف تھانہ شکردرہ میں درج کرلیا گیا اور پولیس نے مقتول کے لاش کی پوسٹ مارٹم رپورٹ حاصل کرتے ہوئے جائے وقوعہ سے اہم شواہد اکٹھے کرکے قبضے میں لے لئے۔ادھر ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر کوہاٹ کیپٹن(ر)واحد محمود نے واقعہ پر سختی سے نوٹس لیتے ہوئے مقامی پولیس کو فوری طور پر اندھے قتل کا سراغ لگانے اور ملوث ملزمان کو گرفتار کرنے کا ٹاسک سونپ دیا۔ملزمان کی گرفتار ی کیلئے ڈی ایس پی لاچی سرکل فضل واحد،ایس ایچ او تھانہ شکردرہ یوسف حیات، انوسٹی گیشن آفیسر ثواب علی،ذین العابدین اور اے ایس آئی اجمل خان پر مشتمل خصوصی سراغ رساں ٹیم تشکیل دی گئی جنہوں نے شب وروز کی انتھک محنت،جدید سائنسی تفتیشی طریقہ کار اور جیو فینسنگ کے ذریعے محض چار دن کے اندر واردات میں ملوث ملزم تک رسائی حاصل کی اور یوں اندھے قتل کا معمہ حل کرتے ہوئے اصل محرکات معلوم کئے اور واقعہ میں ملوث ملزم انوار الحق جو کہ مقتول کا سگا بیٹا ہے کو نہ صرف گرفتار کیا بلکہ انکے قبضے سے آلہ قتل کلاشنکوف بھی برآمد کرکے قبضے میں لے لیاجسے فارنزک شواہد کے طور پر محفوظ کرتے ہوئے جائے وقوعہ سے ملنے والی دیگر اہم شواہد سمیت ایف ایس ایل لیبارٹری بھیج دیا گیا ہے۔ادھر گرفتار ملزم انوار الحق نے ابتدائی تفتیش میں قتل کی اس واردات کا اعتراف جرم کرلیا ہے۔ملزم نے پولیس کو دئیے گئے اپنے بیان میں بتایا کہ اسکا والد بدچلن تھا اور اسکی والدہ کو طلاق دینے کے بعد خود سر ہوکر اس نے بداعمالیوں کی حد یں پار کررکھی تھی جس پر اس نے رات کی تاریکی میں گھر کے اندر گھس کر فائرنگ کرکے اسے ابدی نیند سلادیا اورفوری طور پرجائے وقوعہ سے فرار ہوگیا۔ملزم نے بتایا کہ وہ مقتول کی تدفین میں بھی شریک ہوا تاکہ پولیس سمیت کسی کو بھی ان پر کوئی شک نہ گزرے مگر مجرم چاہے کتنا ہی چالاک کیوں نہ ہو وہ با الآخر قانون کی گرفت میں آہی جاتا ہے۔ پولیس نے گرفتار ملزم کو اندھے قتل کے اس مقدمے میں باقاعدہ طور پر نامزد کردیا ہے اور انہیں عدالت کے سامنے پیش کرکے انکا دوروزہ جسمانی ریمانڈ حاصل کرلیا ہے جسے جسمانی ریمانڈ مکمل ہونے کے بعد دوبارہ عدالت میں پیش کرکے جیل بھیج دیا جائے گا۔ادھر ڈی پی او کوہاٹ کیپٹن(ر)واحد محمود نے اندھے قتل کے اس واقعے میں ملوث ملزم کی گرفتاری کواہم کامیابی قرار دیکر پولیس ٹیم کیلئے نقد انعامات اور تعریفی اسناد کا اعلان کیا ہے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر