اسرائیلی وزیراعظم کی 4یہودیوں کی ہلاکت کے بعد غرب اردن میں باضابطہ جنگ شروع کرنے کی دھمکی

اسرائیلی وزیراعظم کی 4یہودیوں کی ہلاکت کے بعد غرب اردن میں باضابطہ جنگ شروع ...
اسرائیلی وزیراعظم کی 4یہودیوں کی ہلاکت کے بعد غرب اردن میں باضابطہ جنگ شروع کرنے کی دھمکی

  

مقبوضہ بیت المقدس (اے این این) اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو مغربی کنارے اور بیت المقدس میں فلسطینیوں کی مزاحمتی کارروائیوں میں چار یہودیوں کی ہلاکت کے بعد ہسٹیریا کا شکار ہوگئے ہیں اور انہوں نے مغربی کنارے پر باضابطہ اور بلا روک ٹوک جنگ مسلط کرنے کی دھمکی دی ہے۔

اسرائیلی وزیراعظم نے چار گھنٹے طویل جاری رہنے والے ہنگامی سیکیورٹی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ فلسطینی مزاحمت کاروں کے خلاف فیصلہ کن کارروائی کے مختلف آپشنز زیرغور ہیں۔ کسی بھی وقت غرب اردن میں مزاحمت کاروں کے خلاف باضابطہ جنگ شروع کی جاسکتی ہے۔انہوں نے یہودی آباد کاروں کو قتل کرنے والے فلسطینی شہریوں کے مکانات فوری طورپر منہدم کرنے کا حکم دیا اور کہا کہ بیت المقدس اور مغربی کنارے میں یہودی آباد کاروں پر حملے کرنے یا حملوں پر اکسانے والوں کے لیے کوئی جگہ نہیں۔ ایسے عناصر کو پوری طاقت سے کچل دیا جائے گا۔

اجلاس میں بیت المقدس میں بڑے پیمانے پر کریک ڈاﺅن کرنے اور فلسطینیوں کو انتظامی حراست میں ڈالنے کا بھی فیصلہ کیا گیا۔ اجلاس میں نابلس میں بیت فوریک کے مقام پر فلسطینی مزاحمت کاروں کے حملے میں دو یہودی آباد کاروں کے قتل کے واقعے کی رپورٹ بھی پیش کی گئی۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ فلسطین میں مزاحمت کاروں کی سرگرمیوں میں غیرمعمولی اضافہ ہوا ہے۔

مزید : بین الاقوامی