اسٹیل مل کی نجکاری کی گئی تو زمین کی گئی تو زمین کی الاٹمنٹ منسوخ ہو جائے گی ،مراد علی شاہ

اسٹیل مل کی نجکاری کی گئی تو زمین کی گئی تو زمین کی الاٹمنٹ منسوخ ہو جائے گی ...

کراچی (اسٹاف رپورٹر)وزیرخزانہ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ اسٹیل مل کی نجکاری کی گئی تو زمین سندھ کی ملکیت ہے الاٹمنٹ منسوخ ہوجائے گی ۔وزارت پانی و بجلی صوبے کو بجلی کی فراہمی میں ناکام ہوچکی ہے۔ تاجروں سے ود ہولڈنگ ٹیکس لینا زیادتی ہے۔ یہ زبردستی کا ٹیکس ہے۔ اس کے بجائے انکم ٹیکس وصولی کانظام بہتر کرنا چاہیے ۔ ایل این جی کو پروموٹ کرنے کے لئے سندھ کے سولر اور ونڈ پاور پروجیکٹ کو نظر انداز کیاجارہا ہے۔وہ پیر کو بین الاقوامی ریونیو کانفرنس میں شرکت کے موقع پر میڈیا سے بات چیت کررہے تھے ۔سید مراد علی شاہ نے کہا کہ حیسکو اور سیپکو زیادہ لئے جانے والے پیسوں کا حساب دیں ۔ وزارت پانی و بجلی بجلی فراہم کرنے میں ناکام ہو گئی ہے۔مراد علی شاہ نے کہا کہ بجلی کے نرخوں میں اضافہ کرکے عوام کے زخموں پر نمک چھڑکا جا رہا ہے۔ پانی بجلی ایکٹ کے تحت حکومت سندھ نیپرا کی رپورٹ آنے کے بعد فیصلہ کرے گی،ا نہوں نے کہا کہ ہم نجکاری کے خلاف ہیں۔سندھ حکومت نے اسٹیل ملز خریدنے کے لیے کوئی رابطہ نہیں کیا۔انہوں نے کہا کہ اگلے این ایف سی ایوارڈ میں وفاق سے اشیا پر سیلز ٹیکس کی وصولی صوبوں کو دینے کی سفارش کی جائے گی۔ 1973 کے آئین کے تحت آئل اینڈ گیس رائلٹی فیڈریشن وصول کرتا ہیاس سلسلے میں ہماری کوشش ہے کہ رائلٹی صوبے وصول کریں کیونکہ آئل اینڈ گیس کے مسائل صوبے حل کرتے ہیں ۔مراد علی شاہ نے بتایا کہ پچھلے سال ایس آر بی کا کلیکشن 49.3 بلین روپے تھا ۔ اس سال 62 ارب روپے رہا۔جبکہ اگلے دو سالوں میں ریونیو ٹارگٹ کا ہدف سو ارب روپے پر جائے گا۔انہوں نے کہا کہ ای پیمنٹ کا سلسلہ اگلے پیر سے شروع ہوجائیگا

مزید : کراچی صفحہ آخر