’’ٹریکٹر ٹرالی‘‘ خواجہ آصف کیخلاف دائر شیریں مزاری کی درخواست خارج

’’ٹریکٹر ٹرالی‘‘ خواجہ آصف کیخلاف دائر شیریں مزاری کی درخواست خارج

اسلام آباد(اے این این) اسلام آباد ہائی کورٹ نے ٹریکٹر ٹرالی کہنے پر تحریک انصاف کی رہنما شیریں مزاری کی وزیر دفاع خواجہ آصف کے خلاف درخواست خارج کردی۔ بدھ کو پی ٹی آئی رہنما شیریں مزاری کی جانب سے وزیر دفاع خواجہ آصف کے خلاف ہتک عزت کی سماعت اسلام آباد ہائی کورٹ میں جسٹس اطہر من اللہ کی عدالت میں ہوئی۔ اس موقع پر شیریں مزاری کے وکیل کی جانب سے دلائل میں کہا گیا کہ خواجہ آصف نے اسپیکر کو مخاطب کر کے کہا اے ٹریکٹر ٹرالی نوں وی چپ کرواو ذرا، خواجہ آصف نے غیر پارلیمانی زبان استعمال کی جس کے خلاف اسپیکر قومی اسمبلی کو بھی کارروائی کا کہا گیا لیکن انہوں نے کوئی کارروائی نہیں کی۔شیریں مزاری کے وکیل نے درخواست میں موقف اختیار کیا کہ خواجہ آصف کو اسمبلی رکنیت کے لیے نااہل قرار دینے کا معاملہ الیکشن کمیشن بھجوانے کا حکم دیا جائے اور اسپیکر قومی اسمبلی کو خواجہ آصف کے خلاف انضباطی کارروائی کا حکم دیا جائے۔ عدالت نے شیریں مزاری کی جانب سے دائر درخواست کو خارج کرتے ہوئے کہا کہ پارلیمانی معاملہ عدالت میں زیر بحث نہیں لایا جاسکتا۔ عدالت بنیادی حقوق کی خلاف ورزی پر مداخلت کا اختیار رکھتی ہے ، کیا عدالت عالیہ پارلیمانی امور میں مداخلت کر سکتی ہے یا نہیں؟ ڈاکٹر شیریں مزاری کے وکیل نے موقف اپنایا کہ اسپیکر قومی اسمبلی کو دی گئی درخواست پر کچھ نہیں ہوا ، یہ معاملہ ہتک عزت کا ہے، خواجہ آصف نے خاتون رکن قومی اسمبلی کی ذات پرحملہ کیا ہے، خواجہ آصف نے جان بوجھ کر اسمبلی میں میری ذات پر حملہ کیا ہے اور انہوں نے مجھ سے معافی بھی نہیں مانگی، خاتون کی تضحیک ہونے پر وزیر اعظم کو مداخلت کرنا چاہئے تھی ، کل کوئی دوسرا شخص بھی وزیراعظم کے گھر کی خواتین کو نشانہ بنا سکتا ہے ۔عدالت نے درخواست خارج کرتے ہوئے ریمارکس دئیے کہ عدالت پارلیمنٹ کے معاملات میں مداخلت نہیں کر سکتی ۔

مزید : صفحہ آخر