دفاع پاکستان کونسل کا بھارتی جارحیت کیخلاف تحریک چلانے کا اعلان

دفاع پاکستان کونسل کا بھارتی جارحیت کیخلاف تحریک چلانے کا اعلان

  

لاہور(اے این این)دفاع پاکستان کونسل میں شامل جماعتوں کے مرکزی قائدین نے کنٹرول لائن پربھارتی جارحیت اور کشمیر میں ریاستی دہشت گردی کیخلاف ملک گیر تحریک چلانے کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ 27اکتوبر کومظفر آباد سے چکوٹھی تک مارچ کیا جائے گا۔ 28اکتوبر کو اسلام آباد میں بڑی کانفرنس ہو گی۔دفاع پاکستان کونسل کی سٹیئرنگ کمیٹی جلد ملک کے دوسرے شہروں میں لانگ مارچ اور دیگر عوامی پروگراموں کے انعقاد کا اعلان کرے گی۔کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے‘پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس بلا کر مسئلہ کشمیر کے حوالہ سے اس موقف کو دنیا کے سامنے واضح کیا جائے۔انڈیا کی آٹھ لاکھ فوج کشمیریوں کی نسل کشی کر سکتی ہے تو پاکستان کو بھی ان کی ہر ممکن مدد کرنی چاہیے۔ بھارت سرجیکل سٹرائیک کا دعویٰ کر کے دنیا کو منہ دکھانے کے قابل نہیں رہا۔ تحریک آزادی کو نتیجہ خیز بنانے کیلئے عملی اقدامات کئے جائیں۔ امریکہ نائن الیون کی آڑ میں سعودی عرب کیخلاف خوفناک سازشیں کر رہا ہے۔ مسلم دنیا سعودی عرب کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کی صلیبی و یہودی سازشیں کامیاب نہیں ہونے دی گی۔ چین کی طرف سے برہم پترا کا پانی بند کرنا خوش آئند ہے۔ ہم اس پر چین کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔ روس اور پاکستان کی فوجی مشقیں عسکری قیادت کی کامیاب پالیسی کا نتیجہ ہے۔ چیئرمین دفاع پاکستان کونسل مولانا سمیع الحق کی زیر صدارت اسلام آباد کے مقامی ہوٹل میں ہونے والے اجلاس سے پروفیسر حافظ محمد سعید،سردار عتیق احمد خاں، مولانا محمد احمد لدھیانوی، لیاقت بلوچ، شیخ رشید احمد،اجمل خاں وزیر،مولانا فضل الرحمن خلیل، پروفیسر حافظ عبدالرحمن مکی، عبداللہ گل، حافظ عبدالغفار روپڑی،قاری یعقوب شیخ،مولانا محمود الحسن، مولانا حامد الحق حقانی، مولانا یوسف شاہ و دیگر نے خطاب کیا ۔ دفاع پاکستان کونسل کے چیئرمین مولانا سمیع الحق نے اپنے خطاب میں کہاکہ اس وقت وحدت امت کی سخت ضرورت ہے۔ دشمن افغانستان میں بیٹھا ہوا ہے اور بھارت بھی پاکستان کیخلاف خوفناک سازشیں کر رہا ہے۔جہاد کا طبل گلی کوچوں میں پھیلانا ہونا ہو گا اور پوری قوم کو متحد کرنا ہو گا۔ امیر جماعۃالدعوۃ پاکستان پروفیسر حافظ محمد سعید نے کہاکہ کشمیر کا مسئلہ عوامی سطح پر اٹھائیں تاکہ حکومت اس مسئلہ کو ٹھنڈا نہ ہونے دے۔ آج کشمیر میں آزادی کی جنگ لڑنے والوں کو دہشت گردی قراردیا جارہا ہے۔ ہمیں اپنا موقف دنیا کو سمجھانا ہے۔

مزید :

صفحہ آخر -