سعودی حکومت کی طرف سے پہلی دفعہ عمرہ کرنیوالوں پر 2ہزار ریال کی لازمی ادائیگی کی شرط سے عمرہ ایجنٹ پریشان

سعودی حکومت کی طرف سے پہلی دفعہ عمرہ کرنیوالوں پر 2ہزار ریال کی لازمی ادائیگی ...

  

لاہور(میاں اشفاق انجم سے)پہلی دفعہ عمرہ کرنے والوں پر دو ہزار ریال کی لازمی ادائیگی کے سعودی حکومت کے فیصلے نے بحران پیدا کر دیا ،سعودی عمرہ کمپنیوں نے معذوری ظاہر کردی ،عمرہ سیزن التوا کا شکارہو گیا ،یکم محرم سے عمرہ سیزن کا آغاز نا ممکن ہوگیا دو ہزار یال اگر ہر عمرہ کرنے والے پر لازم کیا گیا تو عمرہ غریب کی پہنچ سے نہ صرف باہر ہو جائے گا بلکہ عمرہ اکانومی پیکج پاکستان سے کم ازکم ڈیڑھ لاکھ سے اوپرہو گاجو ہر کسی کے بس میں نہیں ہو گا ،پاکستانی عمرہ ایجنٹوں کی تجاویز کی روشنی میں سعودی عمرہ کمپنیوں نے سعودی وزارت حج کو مشکلات سے آگاہ کر دیا سعودی وزارت حج نے وقت مانگ لیا اب عمرہ یکم محرم کی بجائے یکم صفر سے شروع ہونے کے امکانات بڑھ گئے ہیں ،3اکتوبر سے 3نومبر تک ائیرلائنز کی ایڈوانس ٹکٹ خریدنے والوں کو کروڑوں کا جھٹکا لگے گا اور بڑے نقصان کا سامنا کرنا پڑے گا یاد رہے اس سال سعودی حکومت نے عمرہ سیزن یکم صفر سے شروع کرنے کا پروگرام دیا تھا اور پہلی دفعہ عمرہ کرنے والے دوسری دفعہ عمرہ کرنیوالے پر دو ہزار 4ہزار ریال کی ادائیگی لازمی قرار دے دی تھی جس کی وجہ سے سعودی عمرہ کمپنیوں کو دنیا بھر کے ایجنٹوں سے ایگریمنٹ کرنے میں سخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے کیونکہ سعودی فیصلے سے عمرہ پیکج ڈبل ہو گیا تھا مزاحمت آنے کے بعد سعودی حکومت نے مہلت طلب کر لی تھی اس لیے عمرہ کا آغاز تاخیر کا شکار ہو گیا ہے۔

پریشان

مزید :

صفحہ آخر -