نیشنل ایکشن پلان نیک نیتی کیساتھ عملدرآمد کا متقاضی ہے ،آغا حامد موسوی

نیشنل ایکشن پلان نیک نیتی کیساتھ عملدرآمد کا متقاضی ہے ،آغا حامد موسوی

  

اسلام آباد (جنرل رپورٹر)سپریم شیعہ علماء بورڈ کے سرپرست اعلی و تحریک نفاذ فقہ جعفریہ کے سربراہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا ہے کہ نیشنل ایکشن پلان کے نتائج باربار کے ٹائم فریم کے بجائے نیک نیتی کے ساتھ عملدرآمدکے متقاضی ہیں ، کوئٹہ اور واہ کینٹ میں دہشت گردی کے محرکات کا پتہ چلاکر مجرموں کو عبرتناک سزا دی جائے دہشت گردی میں کمی فوج کے خوف اور ضرب عضب کی وجہ سے آئی حکمران سیاستدان آج بھی دہشت گردی کے خاتمے پر مصلحتوں کا شکا ر ہیں دہشت گردی کے محرکات کو ختم نہ کیا گیا توپاک فوج کی قربانیاں رائیگاں چلی جائیں گی ،نیشنل ایکشن پلان کے تحت گرفتار شدگان کی تعداد تو بتائی جاتی ہے گرفتاری کے بعد رہا ہو جانے والوں کی تعداد سے بھی قوم کو آگاہ کیا جائے ،حکومت نے کشمیر پارلیمانی اجلاس میں وسعت قلبی کا مطاہرہ نہیں کیا جو جماعتیں انتخابات میں حصہ نہیں لیتیں یااسمبلی سے باہرہیں ان جماعتوں کو بھی بلایا جانا چاہئے تھا،فورتھ شیڈول کو بھارتی ٹاڈا کی طرح سیاہ قانون نہ بنایا جائے ،نیشنل ایکشن پلان کا غلط استعمال کرنے والے افسران کے خلاف کاروائی کیلئے نظام وضع کیا جائے تاکہ خانہ پری کلچر ختم ہو سکے ، کشمیر و فلسطین کی آزادی کیلئے کربلا شناسی ضروری ہے دین و شریعت پر بہار نواسہ رسول ؐامام حسینؑ اور ان کے جانثاروں کی قربانی کے دم سے ہے عزاداری مظلوموں کی پناہ گاہ اور ظالمین کے خلاف موثر ترین پرامن احتجاج ہے ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے سپریم شیعہ علماء بورڈ کے عہدیداران سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ کالعدم تنظیمیں آزاد پھر رہی ہیں ہرروزوہ ریلیاں نکالتی ہیں اخبارات میں بیان دیتی ہیں ٹی وی چینلز پر ناصحانہ بیانات جاری کرتی ہیں حکومت اپوزیشن کے دائیں بائیں بیٹھ کر پریس کانفرنسیں کرتی ہیں ، انتہا پسندی کے خاتمے کیلئے محض مذہبی جماعتوں کو نشانہ بنانے کا کوئی فائدہ نہیں دہشت گردوں کے سیاسی سہولت کاروں پر بھی ہاتھ ڈالا جائے ۔انہوں نے کہا کہ کئی مقامات پر انتظامیہ نے محض سرکردہ شخصیت یا عزادار ہونے کی بناء پر ایسی شخصیات کو شیڈول فور میں ڈال دیا ہے جن کا کسی کالعدم تنظیم یا کسی بھی قسم کی انتہا پسندی سے دور دور کا بھی واسطہ نہیں ،لیکن ان شکایات سننے کیلئے کوئی میکنزم ہی موجود نہیں خدارا حکمران زبان خلق کو سنیں ورنہ ایسا وقت آنے میں دیر نہیں لگے گی جب کوئی اُن کی بھی سننے کو تیار نہیں ہوگا۔آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ اگرچہ بھارت جنگ کرنے کی جرات مول نہیں لے سکتا اس کے باوجود کسی غفلت یا سستی کا مظاہرہ نہیں کیا جانا چاہئے اور دشمن سے مقابلے کیلئے اپنی قوت استعداد کو بڑھاتے رہنا چاہئے کیونکہ بھارت اسرائیل و امریکہ کے گٹھ جوڑ سے اسلحے کے انبا لگا رہا ہے ۔انہوں نے اس امر پر دکھ کا اظہار کیا کہ استعماری قوتیں یہودو ہنود کا تسلط قائم کرنے کیلئے ایڑی چوٹی کا زور لگا رہی ہیں جبکہ مسلمان ایک دوسرے کو گرانے میں مصروف ہیں ۔آغا سید حا مد علی شاہ موسوی نے کہا نانا نبی ؐ کے میلاد اور نواسے حسین ؑ کی عزاداری کے جلوس امت مسلمہ کی وحدت اور شوکت کی علامت ہیں ان عظیم شعائر پر کبھی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -