ڈونرز کانفرنس، افغانستان کیلئے 15 ارب ڈالر امداد کا اعلان، پاکستان 50 کروڑ ڈالر دے گا

ڈونرز کانفرنس، افغانستان کیلئے 15 ارب ڈالر امداد کا اعلان، پاکستان 50 کروڑ ...
ڈونرز کانفرنس، افغانستان کیلئے 15 ارب ڈالر امداد کا اعلان، پاکستان 50 کروڑ ڈالر دے گا

  


برسلز (ویب ڈیسک) افغانستان کی مالی اعانت کے لئے عالمی ڈونرز کانفرنس میں جنگ زدہ ملک کے لئے آئندہ چار برسوں تک 15 ارب 20 کروڑ ڈالر امداد کا اعلان کردیا گیا ہے، امداد کے لئے افغانستان کو کرپشن کا خاتمہ ، انسانی حقوق کا تحفظ اور یورپ سے افغان مہاجرین کی واپسی شامل ہے ، پاکستان نے بھی پڑوسی ملک کو 50 کروڑ ڈالر امداد دینے کا وعدہ کیا ہے،پاکستانی مشیرخارجہ کا کہنا ہے کہ پرامن، مستحکم اور خوشحال افغانستان خود پاکستان کے لیے بہت ضروری ہے، کانفرنس میں طالبان پر امن مذاکرات میں شمولیت کے لئے بھی زور دیا گیا ہے، یورپی یونین کے انٹرنیشنل ڈیولپمنٹ کمشنر نیون میمیکا نے تالیوں کی گونج میں کانفرنس کے اختتام پر کہا کہ میں یہ بتانا چاہتا ہوں کہ اس کامیابی کا سہرا سب کے سر ہے۔

روزنامہ پاکستان کی خبریں اپنے ای میل آئی ڈی پر حاصل کرنے اور سبسکرپشن کیلئے یہاں کلک کریں

انہوں نے کہا کہ مجھے یہ کہتے ہوئے خوشی محسوس ہورہی ہے کہ ہم نے مشترکہ طور پر افغانستان کے لئے 15 ارب 20 کروڑ ڈالر امداد دینے کا وعدہ کیا ہے جو ایک غیر معمولی اور موثر رقم ہے، اس کے بدلے میں افغانستان کو ملک میں اصلاحات کے وعدے پورے کرنے ہوں گے جس میں کرپشن کا خاتمہ اور انسانی حقوق کا تحفظ اور یورپ سے افغان مہاجرین کو واپس لینا شامل ہے، اس موقع پر افغان صدر اشرف غنی نے کانفرنس کو بتایا کہ افغانستان معیشت کی بحالی، کرپشن کے خاتمے اور انسانی حقوق کے حوالے سے کام کررہا ہے لیکن اسے تبدیلیوں کے لئے عالمی تعاون کی ضرورت ہے، افغانستان کے شہری امن قائم کرسکتے ہیں، ہم امن قائم کریں گے اور تخریبی سیاست کے بجائے تعمیری سیاست کے لئے پرعزم ہیں۔

دوسری جانب پاکستان نے پڑوسی ملک افغانستان میں اقتصادی ترقی کے منصوبوں کے لیے مزید 50 کروڑ ڈالر دینے کا عزم ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایک پرامن، مستحکم اور خوشحال افغانستان خود پاکستان کے لیے بہت ضروری ہے، دوسری جانب افغانستان کے لیے مالی اعانت فراہم کرنے سے متعلق برسلز میں ہونے والی کانفرنس سے بدھ کو خطاب کرتے ہوئے پاکستان کے مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے اعلان کیا کہ ان کا ملک مزید تین ہزار افغان طلبا کو اپنے ہاں طب، انجینیئرنگ، بنکاری اور دیگر شعبوں کے لیے اعلیٰ تعلیم کے وظائف دے گا جس کا مقصد افغانستان میں اداروں کی تعمیر میں مدد فراہم کرنا ہے، دفتر خارجہ سے جاری ایک بیان میں بتایا گیا کہ اس سے قبل بھی پاکستان افغانستان کے لیے 50 کروڑ ڈالر کا امدادی پیکج دے چکا ہے جس کے تحت بنیادی ڈھانچے، تعلیم اور صحت کے شعبوں میں جاری منصوبے پایہ تکمیل کو پہنچنے والے ہیں جب کہ تین ہزار افغان طلبا پہلے پاکستان میں اعلیٰ تعلیم کے وظائف حاصل کر چکے ہیں، برسلز کانفرنس میں سرتاج عزیز نے ایک بار پھر افغانستان میں دیرپا امن کے لیے سیاسی مذاکرات کو ہی قابل عمل راستہ قرار دیا، انھوں نے افغان حکومت اور حزب اسلامی کے درمیان ہونے والے امن معاہدے کو سراہتے ہوئے پاکستان کی طرف سے افغانستان کے مصالحتی عمل کی حمایت جاری رکھنے کے عزم کا اعادہ بھی کیا، یہ کانفرنس افغان قیادت اور یورپی یونین کی مشترکہ میزبانی میں منعقد کی گئی ہے جس میں 70 سے زائد ممالک اور تنظیموں کے نمائندے شریک ہیں۔

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے افغانستان کے صدر اشرف غنی نے اپنے ملک کے لیے مستحکم بین الاقوامی معاونت کی درخواست کرتے ہوئے اس عزم کا اظہار کیا کہ حکومت ملک میں غربت کے خاتمے کی کوششوں پر توجہ دے گی، ان کا کہنا تھا کہ "ہم غربت میں کمی اور اس کے خاتمے پر مسلسل توجہ مرکوز رکھیں گے، صدر غنی کے مطابق افغانستان کی 39 فیصد آبادی اب بھی 1.35 ڈالر روزانہ کی آمدن سے بھی کم پر گزارہ کر رہی ہے۔

مزید : بین الاقوامی


loading...