تاریخ گواہ ہے پیپلز پارٹی کے وزیر داخلہ نے سکھوں سے متعلق فہرست بھارت کو دی ،مشاہد اللہ کے بیان پر اسمبلی میں ہنگامہ برپا

تاریخ گواہ ہے پیپلز پارٹی کے وزیر داخلہ نے سکھوں سے متعلق فہرست بھارت کو دی ...
تاریخ گواہ ہے پیپلز پارٹی کے وزیر داخلہ نے سکھوں سے متعلق فہرست بھارت کو دی ،مشاہد اللہ کے بیان پر اسمبلی میں ہنگامہ برپا

  


اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک )مسلم لیگ ن کے رہنما مشاہد اللہ نے کہا ہے کہ تاریخ گواہ ہے کہ پیپلز پارٹی نے کے ایک وزیر داخلہ نے بھارت کو سکھوں کی فہرستیں فراہم کیں ۔اس بیان پر قومی اسمبلی میں ہنگامہ برپاہو گیا پیپلز پارٹی کے اراکین اسمبلی نے نعرے بازی شروع کردی ”مودی کا جو یار ہے غدار ہے غدار ہے“۔

کشمیر ایشو کو متنازع نہیں بنانا چاہتے ، حکومت کیوں پاﺅں پر کلہاڑی مار نا چاہتی ہے : خورشید شاہ

قومی اسمبلی میں کشمیر کے معاملے پر بلائے گئے اجلاس میں لیگی رہنما مشاہد اللہ نے موضوع کو چھوڑ کر پیپلز پارٹی کو آڑے ہاتھوں لیا تو ،پی پی اراکین نے نعرے بازی شروع کردی جس سے مشاہد اللہ کی تقریر کے دورا ایوان میں شور شرابا شروع ہو گیا ،اس صورتحال پر اسپیکر ایاز صادق ایک طرف مشاہد اللہ کو صرف کشمیر پر بات کرنے کی ہدایت کرتے رہے تو دوسری طرف پی پی اراکین کو خاموش رہنے کی بھی تلقین کرتے رہے ۔مشاہد اللہ نے کہا کہ پیپلز پارٹی کو بتا نا ہو گا کہ انہیں چھلانگیں مارنا کس نے سکھایا ۔ان کا کہنا تھا کہ پی پی والے کہتے ہیں نواز شریف پاناما پیپرز میں اپنا نام کلیئر کریں ،سندھ کے چیف جسٹس نے کہا لاڑکانہ میں اربوں روپے لگائے گئے کوئی کام نہیں ہوا ۔مشاہد اللہ نے پی پی اراکین کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ 2018تو دور کی بات 2028میں بھی آپ کا وزیر اعظم نہیں بنے گا ۔اعتزاز احسن کی تقریر پر بات کرتے ہوئے مشاہد اللہ نے کہا کہ ایوان میں کہا گیا وزیراعظم نے اقوام متحدہ میں کلبھوشن کا نام نہیں لیا ،وزیراعظم نے کلبھوشن یادیو سے متعلق ڈوزئیر بانکی مون کو دے دیا ہے ،نواز شریف بڑھکیں مارنے والے نہیں کام کرنے والے انسان ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ کشمیر کے معاملے پر یکجہتی دکھانے کی ضرورت تھی جو نظر نہیں آئی ۔

مزید : قومی