بالی ووڈ کے دروازے پاکستانی اداکاروں پر بند کرنے کا فیصلہ کل ہوگا

بالی ووڈ کے دروازے پاکستانی اداکاروں پر بند کرنے کا فیصلہ کل ہوگا
بالی ووڈ کے دروازے پاکستانی اداکاروں پر بند کرنے کا فیصلہ کل ہوگا

  

لاہور(سپیشل ایڈیٹر)بالی ووڈ کے ترانے گانے والے پاکستانی فنکاروں کو شرم سے ڈوب مرنا چاہئے کہ جو کام انہیں کرنا چاہئے تھا،وہ کام بالی ووڈ کے کرتا دھرتا کرنے جارہے ہیں۔بھارتی سینماؤں کے نمائش کنندگا ن کی تنظیم نے اعلان کردیا ہے کہ جنتا کی رائے کا احترام کرتے ہوئے بھارتی سینماؤں میں کسی ایسی فلم کی نمائش نہیں ہوگی جس میں پاکستانی اداکار شامل ہوں گے ۔اس فیصلہ سے پاکستانی اداکاروں کے ارمانوں پر اوس پڑگئی ہے۔ ایک ہفتہ پہلے انڈین موشن پیکچرز پروڈیوسرزایسوسی ایشن نے ایک قرارا داد پیش کرتے ہوئے پاکستان اداکاروں کو بھارتی فلموں میں کاسٹ کرنے سے منع کیا تھا ۔لیکن پاکستانی اداکار دونوں ملکوں کے حالات کی نزاکت کو نہ سمجھتے ہوئے بھارتی نیتاؤں سے نرمی برتنے کی توقع رکھ رہے تھے۔اس وقت کرن جوہر ،فرحان اختر اور رتیش سدھوانی کی فلموں’’ اے دل ہے مشکل‘‘ اور’’ رئیس ‘‘ میں پاکستانی اداکارہ ماہرہ خان اور فواد خان شامل ہیں ۔ سینما اونرز ایگزیبیٹرز ایسوسی ایشن کے صدر نتن داتر نے کہا ہے کہ 7اکتوبر کو اس بات کا فیصلہ کیا جائے گا کہ آیا رئیس اور اے دل ہے مشکل پر پابندی کا اطلاق کیا جانا چاہئے یا نہیں۔انہوں نے کہاہر وہ پروڈوسر جس کے ایگزیبیٹرز سے معاہدے ہوچکے ہیں اور ان کی فلموں میں بھی پاکستانی اداکار کاسٹ کئے جاچکے ہیں تو بائیکاٹ کی صورت میں ان لوگوں کو قانونی چارہ جوئی کے عدالتوں میں جانا پڑے گا،تاہم پاکستانی اداکاروں پر بولی ووڈ کے دروازے بند کرنا ایسوسی ایشن کا قومی ایجنڈا بن چکا ہے ۔

مزید :

تفریح -