برآمد ہونیوالے بھاری اسلحہ میں جنگی ہتھیار بھی شامل ، نقصانات کا تخمینہ کسی کے بھی ہوش اڑادے

برآمد ہونیوالے بھاری اسلحہ میں جنگی ہتھیار بھی شامل ، نقصانات کا تخمینہ کسی ...
برآمد ہونیوالے بھاری اسلحہ میں جنگی ہتھیار بھی شامل ، نقصانات کا تخمینہ کسی کے بھی ہوش اڑادے

  

کراچی (آن لائن) نائن زیرو کے قریب سے ملنے والے بھاری اسلحہ سے کتنا جانی مالی نقصان ہوسکتا تھا اس کا اندازہ لگاتے ہی ہوش اڑ جاتے ہیں۔کراچی کے علاقے عزیزآباد میں متحدہ کے مرکز نائن زیروکے قریب واقع گھر سے ملنے والے اسلحے میں وہ ہتھیار بھی شامل ہیں جو جنگ کے دوران استعمال ہوتے ہیں،جہاز اور ہیلی کاپٹرز گرانے والی دو چار نہیں چودہ اینٹی ایئرکرافٹ گنز ملیں، اس گن سے بتیس سو میٹر یعنی فضا میں تین کلو میٹر سے زائد تک جہاز ہیلی کاپٹر مار گرایا جاسکتا ہے۔اِسی طرح آر پی جی سیون راکٹ ، نو سو میٹر یعنی لگ بھگ ایک کلو میٹر دور تک بکتربند گاڑی ،ٹینک اوربنکر تباہ کرسکتا ہے۔ نو آر پی جی سیون لانچر اور چوراسی راکٹ کی برآمدگی بھی کسی بڑی عسکری پیش قدمی کو روکنے سے کم نہیں۔درجنوں کی تعداد میں پکڑی جانیوالی سب مشین گنیں ،جی تھری، سیون ایم ایم، چائنیز رائفلیں، سنائپر،شاٹ گن اور رپیٹر سے ہونے والی تباہی بھی بے حساب ہے۔ڈھائی ہزار اوان بم اور تین سو دستی بم الگ ہیں۔اسلحے میں ڈھائی ہزار اوان بم اور تین سو دستی بم بھی شامل ہیں۔ ایک دستی بم کا حملہ جائے وقوع پر پانچ میٹر کے دائرے میں موجود افراد کو ہلاک اورزخمی کرسکتا ہے۔ اوان بم بھی بڑے پیمانے پر جان کا دشمن ہے۔ساڑھے 9 لاکھ گولیوں سے کتنی اموات ہو سکتی ہیں، اس کا اندازہ آپ خود لگا لیں، دہشت گردوں نے اپنی حفاظت کیلئے ایک سو چالیس بلٹ پروف جیکٹس بھی چھپارکھی تھیں۔

مزید :

کراچی -