آزادی مارچ سے حکومت کے اوسان خطاہوگئے، مولانا گوہرشاہ 

آزادی مارچ سے حکومت کے اوسان خطاہوگئے، مولانا گوہرشاہ 

  

چارسدہ (بیو رو رپورٹ) جمعیت علماء اسلام ضلع چارسدہ کے امیر و سابق رکن قومی اسمبلی مولانا سید محمدگوہر شاہ نے کہا ہے کہ 27اکتوبر کو”آزادی مارچ“ایک ایسی حقیقت ہے جس سے موجودہ حکومت کے اوسان خطاء ہوگئے ہیں۔جمعیت علماء اسلام اور دوسری محبِ وطن پارٹیوں کے کارکن 27اکتوبر کووزیر اعلی کی دھمکی کا بھر پور جواب دینگے۔ انہوں نے اپوزیشن لیڈر اکرم خان دْرانی کو خراج تحسین پیش کیا جنہوں نے اسمبلی فلور پر خیبر پختونخواہ کے وزیر اعلی محمود خان کا چلینج قبول کرکے جے یو آئی اور دوسرے محب وطن جماعتوں کے لاکھوں کارکنوں کی صحیح ترجمانی کی۔انہوں نے کہا کہ قائد جمعیت مولانا فضل الرحمن اس وقت ظلم وجبر اور موجودہ حکومت کے غلط پالیسوں کے خلاف جرأت مندانہ کردارادا کررہے ہیں اور وہ دن دور نہیں کہ موجودہ سلکٹیڈ وزیر اعظم سے قوم کو نجات دلائینگے۔انہوں نے کہا کہ شوکت یوسفزئی جیسے نااہل لوگ مولانا فضل الرحمن صاحب جیسے عظیم لیڈر کا کیا مقابلہ کرینگے۔ موصوف اپنی نوکریپکی کرنے کے لئے قائدِجمعیت مولانا فضل الرحمن کے خلاف زبان درازی کرکے خود کو وزیراطلاعات کے حیثیت سے اخباروں کے صفحات پر زندہ رکھنا چاہتے ہیں۔اْنھوں نے کہا کہ ایک طرف تو یہ لوگ آزادی مارچ کی حیثیت سے انکاری ہے جبکہ دوسری طرف آزادی مارچ سے اتنے خوفزدہ ہیں کہ وفاقی اور صوبائی وزراء سمیت تحریک انصاف کے پوری قیادت اس وقت آزادی مارچ کے خلاف ہر زہ سرائی میں مصروف عمل ہے اور تمام سلیکٹیڈ قیادت شتر بے مہار بن چکی ہے جو اپنے غیرسنجیدہ بیانات کے ذریعے مولانا فضل الرحمن کی ذات پر بے بنیاد الزامات لگانے پر اتر آئے ہیں۔ اْنھوں نے کہا کہ 27اکتوبر کو نہ صرف کارکنان جمعیت بلکہ ملک کی دیگر محب وطن اور جمہوریت پسند جماعتوں کے کار کن آزادی مارچ کے قافلہ میں شریک ہو کر موجودہ حکومت کا تختہ اْلٹ کر دم لینگے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -