جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ کیلئے انتظامی تیاریاں مکمل‘ عثمان بزدار کا دعویٰ

جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ کیلئے انتظامی تیاریاں مکمل‘ عثمان بزدار کا دعویٰ

  

ملتان (نیوز رپورٹر) وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے کہاکہ وزراء کی کارکردگی کا جائزہ لے رہا ہوں۔وزراء کے محکموں میں ردوبدل وزیراعلیٰ کا اختیار ہے۔ جنوبی پنجاب کا صوبہ بنانے کیلئے دو تہائی اکثریت چاہیے، انہوں نے کہاکہ مولانا فضل الرحمان دھرنے کیلئے آئیں تو سہی پھردیکھیں (بقیہ نمبر26صفحہ12پر)

گے۔وہ گزشتہ روز سرکٹ ہاؤس ملتان میں میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کررہے تھے۔انھوں نے کہا کہ میں ہر ضلع اورڈویژن کا دورہ کررہا ہوں۔ملتان میں اربوں روپے کے ترقیاتی منصوبوں پر کام جاری ہے۔ نشترٹوہسپتال کا کام شروع ہورہا ہے۔انہوں نے کہاکہ صحافیوں کے مسائل کے حل کیلئے جرنلسٹ ہاؤسنگ فاؤنڈیشن کاسب آفس ملتان میں کھولا جائے گا۔وزیراعلیٰ نے صحافیوں کو بھی صحت انصاف کارڈ کے اجراء کا اعلان کرتے ہوئے کہاکہ ہاؤسنگ کالونی فیز ٹو کیلئے کمشنرکو ہدایات جاری کردی گئی ہیں اورصحافیوں کا یہ مسئلہ بھی حل کریں گے۔انہوں نے کہاکہ ملتان پریس کلب کی گرانٹ کے ایشو کو بھی حل کیا جائے گا۔جنوبی پنجاب کی ترقی و خوشحالی کیلئے 35فیصد فنڈز رکھے گئے ہیں اور یہ فنڈز صرف جنوبی پنجاب پر ہی خرچ ہوں گے۔انہوں نے کہاکہ پنجاب کابینہ نے جنوبی پنجاب کیلئے مختص فنڈز کسی اور مقصد کیلئے استعمال کرنے پر پابندی عائد کردی ہے۔وزیراعلیٰ نے کہاکہ جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ کیلئے تین ارب روپے رکھے گئے ہیں اورجنوبی پنجاب سیکرٹریٹ کے قیام کیلئے انتظامی لحاظ سے تیاریاں مکمل ہیں۔سیاسی اتفاق رائے کے ذریعے سیکرٹریٹ کے مقام کا اعلان کیا جائے گا۔وزیراعلیٰ نے کہاکہ ڈیرہ غازی خان میں انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی کا اسی ماہ سنگ بنیاد رکھا جائے گا۔پنجاب کے پسماندہ علاقوں میں 5مدر اینڈ چائلڈ ہسپتال بنائے جارہے ہیں۔نشتر ہسپتال میں 30ڈائیلسز کی نئی مشینوں کا اضافہ کیا جارہا ہے۔شعبہ صحت کو بہتر بنانے کے لئے ہر ضروری اقدام اٹھائیں گے۔انہوں نے کہاکہ والڈ سٹی آف لاہور اتھارٹی کا دائرہ کار پنجاب بھر میں پھیلا دیاگیاہے۔ملتان کی تاریخی عمارتوں کی اصل حالت میں بحالی کا کام جلد شروع ہوگا۔ انھوں صحافیوں کے مختلف سوالوں کے جواب دیتے ہوئے کہا کہ جنوبی پنجاب کا صوبہ بنانے کیلئے دو تہائی اکثریت چاہیے۔وزیراعلیٰ نے کہاکہ وزراء کی کارکردگی کا جائزہ لے رہا ہوں۔وزراء کے محکموں میں ردوبدل وزیراعلیٰ کا اختیار ہے۔انہوں نے کہاکہ مولانا فضل الرحمان دھرنے کیلئے آئیں تو سہی پھردیکھیں گے۔جبکہ وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدارکی زیر صدارت گزشتہ روز سرکٹ ہاؤس ملتان میں اعلیٰ سطح کااجلاس منعقدہوا، وزیرخارجہ شاہ محمودقریشی بھی اجلاس میں شریک ہوئے۔اجلاس میں ملتان ڈویژن کے ترقیاتی منصوبوں پر پیشرفت،امن وامان کی صورتحال اورانسداد ڈینگی کیلئے کیے جانیوالے اقدامات کا جائزہ لیاگیا۔ وزیراعلیٰ نے انسداد ڈینگی کے لئے بروقت اقدامات نہ کرنے کے حوالے سے عوامی نمائندوں کی شکایات کا سخت نوٹس لیتے ہوئے برہمی کا اظہار کیا اورمتعلقہ حکام کی سرزنش کی۔وزیراعلیٰ نے نقش بند کالونی اور دیگر علاقوں میں ڈینگی لاروا پائے جانے کی شکایات کی انکوائری کا حکم دیتے ہوئے ہدایت کی کہ ڈینگی سرویلنس میں کوتاہی کا ارتکاب کرنے کے ذمہ داروں کے خلاف کارروائی کی جائے۔انہوں نے کہاکہ ڈینگی کے سدباب کی مہم میں کسی قسم کا تساہل قابل قبول نہیں -وزیراعلیٰ نے محکمہ صحت او ردیگر متعلقہ محکموں کو سرویلنس بہتر بنانے کا حکم دیا - انہوں نے کہاکہ کڈنی سنٹر کو ڈی ایچ کیو کے زیر انتظام کرنے کی تجویز پر غورکیاجارہاہے۔وزیراعلیٰ نے ملتان میں سیوریج سسٹم کے بارے میں تفصیلی رپورٹ طلب کی۔انہوں نے کہاکہ ملتان میں انڈر پاسز، فلائی اوورزکی تعمیر اور سڑکوں کی توسیع و مرمت کا جامع پیکیج تیار کیاجائے اورترقیاتی منصوبو ں کے لئے ارکان اسمبلی سے مشاورت جاری رہے گی۔ملتان میں سیوریج اور سالڈ ویسٹ کے مسائل حل کئے جائیں گے۔وزیراعلیٰ نے کہاکہ ملتان کے باربار وزٹ کر کے عوام کے مسائل حل کررہا ہوں۔انہوں نے شجاع آباد میں جرائم میں اضافے پر ڈی ایس پی کو تبدیل کرنے کا حکم دیا۔انہوں نے کہاکہ ملتان ڈویژن میں 405ترقیاتی منصوبوں پر کام جاری ہے اورترقیاتی منصوبوں کے لئے مختص فنڈز کا بروقت استعمال یقینی بنایاجائے۔ترقیاتی فنڈ زکے استعمال میں تاخیرقطعاً برداشت نہیں کی جائے گی۔اجلاس میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، صوبائی وزیر ڈاکٹر محمد اختر ملک، ارکان قومی اسمبلی ملک عامر ڈوگر، احمد حسین ڈیہڑ، ابراہیم خان، ارکان صوبائی ا سمبلی،سیکرٹریز سپیشلائزڈ ہیلتھ کیئر اینڈ میڈیکل ایجوکیشن، تعمیر ات ومواصلات، پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ، سپورٹس، کمشنر ملتان ڈویژن، آرپی اواو ردیگر متعلقہ حکام نے شرکت کی۔علاوہ ازیں وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدارنے گزشتہ روز ملتان کیلئے مختلف منصوبوں کا افتتاح کیا اورسنگ بنیاد رکھا۔ سرکٹ ہاؤس میں منعقدہ تقریب میں صوبائی وزراء،اراکین اسمبلی،پارٹی عہدیداران اورمتعلقہ حکام نے شرکت کی۔وزیراعلیٰ نے نشتر ہسپتال ملتان میں ہیپاٹائٹس سے بچاؤ اورٹریٹمنٹ سینٹر کاافتتاح کیا۔ ہیپاٹائٹس سینٹر پر 56کروڑ روپے لاگت آئی ہے۔وزیراعلیٰ نے نشتر ہسپتال ملتان میں فارمیسی اور سٹور بلاک کی تعمیر کے منصوبے کا سنگ بنیاد رکھا- اس منصوبے پر 35کروڑ روپے لاگت آئے گی۔وزیراعلیٰ نے ملتان میں سنتھیٹک ٹرف ہاکی گراؤنڈ کا سنگ بنیاد رکھا-اس منصوبے پر تقریباً 16کروڑ روپے لاگت آئے گی۔ وزیراعلیٰ نے ملتان کے لئے پنجاب پبلک سروس کمیشن کے علاقائی آفس کی تعمیر کے منصوبے کا بھی سنگ بنیاد رکھا۔اس منصوبے پر 25کروڑ روپے خرچ ہوں گے۔وزیراعلیٰ نے انسداد ڈینگی کے لئے عوامی شعور کی بیداری کیلئے قائم ڈیسک کا بھی معائنہ کیا۔وزیراعلیٰ نے ڈینگی بریگیڈکی گاڑیوں کابھی معائنہ کیا۔وزیراعلیٰ نے انسداد ڈینگی کے لئے قائم ڈیسک میں گہری دلچسپی کا اظہارکیا۔وزیراعلیٰ نے انسداد ڈینگی کے موبائل یونٹ کا بھی معائنہ کیا۔وزیراعلیٰ نے انسدادڈینگی ڈیسک پر موجود عملے اورڈاکٹرز سے سوالات کیے۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ انسداد ڈینگی کیلئے پوری پنجاب حکومت متحرک ہے۔ڈینگی کے مرض پر مسلسل محنت سے قابو پائیں گے۔وزیراعلیٰ کو انسداد ڈینگی کیلئے کیے جانے والے اقدامات کے بارے میں بریفنگ بھی د ی گئی۔وزیراعلی نے کہاکہ ترقیاتی فنڈز کی غیر منصفانہ تقسیم کا باب بند کردیا ہے اورپسماندہ علاقوں کی ترقی پر پورا فوکس ہے۔انہوں نے کہاکہ ماضی میں فنڈزاپنی مرضی سے من پسند منصوبوں پر خرچ کیے گئے۔سابق ادوار میں جان بوجھ کر جنوبی پنجاب کو ترقی کی دوڑ میں پیچھے رکھا گیا۔ انہوں نے کہاکہ تحریک انصاف کی حکومت نے جنوبی پنجاب کے فنڈز کو کسی اورشہر یا منصوبے کے لئے منتقل کرنے پر پابندی لگادی ہے۔اب جنوبی پنجاب کیلئے مختص فنڈز صرف جنوبی پنجاب کے عوام کی ترقی پر خرچ ہوں گے۔وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدارنے نشتر ہسپتال ملتان کا دورہ کیا-وزیراعلیٰ عثمان بزدار ڈینگی کے مریضوں کے علاج کیلئے خصوصی وارڈ میں گئے۔وزیراعلیٰ نے نشتر ہسپتال کے حکام کو ڈینگی وارڈ میں سہولتوں کو مزید بہتر بنانے پر زوردیا۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ ڈینگی مریضوں کیلئے مخصوص وارڈمیں کولنگ اورطبی مانٹیرنگ کاخصوصی خیال رکھاجائے۔ وزیراعلیٰ نے ڈینگی کے مریض سے صورتحال اور انتظامات کے بارے میں استفسار کیا۔سیکرٹری سپیشلائزڈ ہیلتھ اینڈ میڈیکل ایجوکیشن اورایم ایس نشتر ہسپتال نے وزیراعلیٰ کو نشتر ہسپتال ملتان میں ڈینگی کی صورتحال پر تفصیلی بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ ڈینگی کے 4500مریضوں میں سے 3950گھر جا چکے ہیں۔ڈینگی کی صورتحال کو کنٹرول کرنے کیلئے موثر اقدامات کی وجہ سے صورتحال میں بہتری آرہی ہے۔نشتر ہسپتال میں روزانہ 800افراد کو اپنی مدد آپ کے تحت کھانا فراہم کیا جاتا ہے۔ وزیراعلیٰ نے نشتر ہسپتال میں نفرالوجی اینڈ ڈائیلسز یونٹ کا افتتاح کیا۔وزیراعلیٰ نے خواجہ جلال الدین رومی کے ہمراہ ڈائیلسز یونٹ کا معائنہ کیا۔ڈائیلسز اینڈ نفرالوجی یونٹ جلال الدین رومی نے اپنی مدد آپ کے تحت تعمیر کیاہے۔وزیراعلیٰ نے ڈائیلسز کے مریضوں سے گفتگو کی اور ان کی مزاج پرسی کی۔وزیراعلیٰ نے نشتر ہسپتال کے لئے مزید30ڈائیلسز مشینیں فراہم کرنے کا اعلان کیا اور نشتر ہسپتال میں ڈاکٹروں کی کمی کو پورا کرنے کی یقین دہانی کرائی۔انہوں نے کہا کہ نشتر ہسپتال میں ڈاکٹروں کے لئے رہائشگاہیں تعمیر کی جائیں گی۔نشتر ہسپتال کیلئے 5بڑے لیکچر ہال اسی سال دسمبر تک مکمل ہوجائیں گے۔نشتر ہسپتال کی ایمرجنسی کے داخلی راستے میں تجاوزات ختم کی جائیں۔وزیراعلیٰ نے ہر بڑے ہسپتال کے سامنے ٹریفک وارڈن تعینات کرنے کی خصوصی ہدایت کی۔انہوں نے کہا کہ ڈینگی پر قابو پانے کیلئے تمام ضروری وسائل بروئے کار لائے جارہے ہیں۔ انسداد ڈینگی مہم میں تساہل برتنے والے افسروں اور اہلکاروں کیخلاف کارروائی کا آغاز کر دیا ہے۔ صوبائی وزراء ڈاکٹر اختر ملک،ارکان اسمبلی ملک عامر ڈوگر،واصف راں،سیکرٹری سپیشلائزڈ ہیلتھ اینڈمیڈیکل ایجوکیشن اور خواجہ جلال الدین رومی بھی موجود تھے۔ تحریک انصاف کے رہنما و رکن صوبائی اسمبلی نواب ظہیرالدین خان علیزئی وزیر آعلی پنجاب سردار عثمان خان بزدار سے سرکٹ ہاوس میں ملاقات کی اس موقع پر انہوں ملتان میں ہونیوالے ترقیاتی کاموں سیوریج، ٹف ٹائلز اور شہر کے مختلف روڈز کی توسیع و تعمیر پر ان کی توجہ مبذول کرانے سمیت مختلف امور پر گفتگو کی اس موقع پر سینئر پارٹی رہنما چوہدری خالد جاوید وڑائچ بھی ہمراہ تھے اس موقع پر وزیر اعلی سردار عثمان بزدار نے انہیں بآور کراتے ہوئے کہا کہ جنوبی پنجاب کو ماضی میں نظر انداز کیا گیا ہے اس کا ہر ممکن ازالہ کیا جائے گا اور خطے میں ترقیاتی منصوبوں کو جاری رکھنے کے لئیے نیک نیتی اور بروقت فنڈز کی فراہمی اہم ہے جو موجودہ حکومت کی اولین ترجیح ہے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -