آئی لینڈ اتھارٹی سے متعلق صدارتی آرڈیننس ناقابل قبول، بلاول بھٹو

آئی لینڈ اتھارٹی سے متعلق صدارتی آرڈیننس ناقابل قبول، بلاول بھٹو

  

 کراچی (سٹاف رپورٹر،مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئر مین بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ پیپلزپارٹی آئی لینڈ اتھارٹی کے قیام کی مخالفت کر تی ہے، سندھ کے سا حلوں سے منسلک جزائر پرغیر قانونی دعوے کی مخالفت کرینگے۔ آئی لینڈ اتھارٹی سے متعلق صدارتی آرڈیننس ناقابل قبول ہے، یہ آرڈیننس مودی کے مقبوضہ کشمیر میں اقدام جیسا ہے۔دوسری طرف پاکستان پیپلز پارٹی نے آئی لینڈ آرڈیننس روکنے کیلئے سند ھ اسمبلی سے متبادل قانون سازی کا بھی فیصلہ کیا ہے۔صوبائی وزیر اطلاعات ناصر شاہ کا کہنا ہے کہ یہ جزائر حکومت سندھ کی ملکیت ہیں، کسی بھی آرڈینس کے ذریعے سندھ کی زمین پر قبضہ نہیں کیا جاسکتا، آئی لینڈ کی زمین سندھ کی ہے اور اس پر سندھ کے عوام کا حق ہے، سندھ میں موجود جزیروں پر مقا می ماہی گیروں اور دیگر آبادیوں کا حق، صدارتی آرڈیننس صوبائی خودمختیاری اور مقامی لوگوں کی حق تلفی کے مترادف ہے، حکومت سندھ مطالبہ کرتی ہے کہ یہ آرڈینس فوری واپس کیا جائے۔ایک اور ٹویٹ میں چیئر مین پی پی پی بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ میرے والد آصف زرداری کی عدالت میں پیشیوں میں اضافہ پی پی پی کی اے پی سی اور پی ڈی ایم کے قیام پر حکومتی رد عمل ہے، ایک ایسے وقت میں جب ہم کورونا وائرس کی دوسری لہر کا سامنا کررہے ہیں،آصف زرداری ہفتے میں متعدد بار عدالتوں میں بلائے جارہے ہیں، سندھ کے مقدمات کی پنڈی میں سنوائی نہ صرف غیرآئینی ہے بلکہ یہ زیادہ خطرات کی موجب ہے۔

بلاول بھٹو

مزید :

صفحہ اول -