مختلف طلباء تنظیموں کا انتظامیہ کیخلاف احتجاجی مظاہرہ

مختلف طلباء تنظیموں کا انتظامیہ کیخلاف احتجاجی مظاہرہ

  

پشاور(سٹی رپورٹر)مختلف طلبہ تنظیموں نے اسلامیہ کالج پشاور انتظامیہ کی جانب سے کلاسز کے مرحلہ وار اجرائکے شیڈول کو مسترد کرتے ہوئے کالج میں احتجاجی مظاہرہ کیا جسمیں کثیر تعدا د میں طلبہ نے شرکت کی اور انتظامیہ کی جانب سے کلاسز کے مرحلہ وار اجراء کے خلاف شدید نعرہ بازی کی اور پلے کارڈز اور بینرز اٹھا کر کالج میں احتجاجی واک بھی کیا اور وائس چانسلر آفس کے سامنے احتجاج ریکارڈ کروایا اس موقع پر اسلامی جمعیت طلبہ اسلامیہ کالج اور پختون سٹوڈنٹس فیڈریشن اسلامیہ کالج کے عہددیداران نے کہا کہ  طلبہ سے لاکھوں روپے فیسوں کی مد میں لئے گئے ہیں لیکن جامعہ مکمل کھولنے کے بجائے مرحلہ وار کھولا جا رہا ہے اور پہلے ہفتے میں فرسٹ سمسٹر اور پانچویں جبکہ دوسرے ہفتے میں تیسرے اور ساتویں سمسٹر کی کلاسز ہونگے جبکہ ہاسٹل میں صرف کلاسز کے وقت متعلقہ طلبہ کو رہنے کی اجازت ہوگی جو ظالمانہ فیصلہ ہے اس فیصلے سے ہاسٹل میں رہائش پذیر دوردراز سے آئے ہوئے طلبہ کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا طلبہ نے کہا کہ  کا بہت وقت ضائع ہوگیاہے اب مزید وقت ضائع کرنے کے متحمل نہیں ہوسکتے جبکہ اسلامیہ کالج یونیورسٹی کے گذشتہ دس سال کے مالی معاملات کا آڈٹ جبکہ  انتظامیہ کی جانب سے جعلی ڈگریاں جاری کرنے میں ملوث افراد کے خلاف سخت کاروائی کا بھی مطالبہ کیا ہے انتظامیہ طلبہ کے مسائل کرنے کیلئے فلفور اقدامات اٹھائے بعد ازاں طلبہ کے وفد نے وائس چانسلر اسلامیہ کالج پشاور سے ملاقات کی جسمیں  طلبہ کے بیشتر مطالبات تسلیم کیے گئے اور یقین دہانی کرائی گئی کہ یونیورسٹی اور کالج کے تمام ہاسٹلز کو تمام طلبہ کے لئے مکمل طور پر آج کھول دیا  جائے گا جبکہ یونیورسٹی  ہاسٹلز کے طالبات کیلے الگ فی میل پرووسٹ کی تعیناتی پندرہ روز کے اندر عمل میں لائی جائے گی جبکہ کورونا چھٹیوں کی ہاسٹل اور نان ٹیوشن فیس ری فنڈ کیلئے رجسٹرار کی سربرائی میں کمیٹی قائم کردی گئی جو پندرہ روز میں اس حوالے سے لائحہ عمل طے کرے گی۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -