یار کو رغبتِ اغیار نہ ہونے پائے | شبلی نعمانی |

یار کو رغبتِ اغیار نہ ہونے پائے | شبلی نعمانی |
یار کو رغبتِ اغیار نہ ہونے پائے | شبلی نعمانی |

  

یار کو رغبتِ اغیار نہ ہونے پائے 

گلِ تر کو ہوسِ خار نہ ہونے پائے 

اس میں در پردہ سمجھتے ہیں وہ اپنا ہی گلہ 

شکوۂ چرخ بھی زنہار نہ ہونے پائے 

فتنۂ حشر جو آنا تو دبے پاؤں ذرا 

بختِ خفتہ مرا بیدار نہ ہونے پائے 

ہائے دل کھول کے کچھ کہہ نہ سکے سوزِ دروں 

آبلے ہم سخنِ خار نہ ہونے پائے 

باغ کی سیر کو جاتے تو ہو پر یاد رہے 

سبزہ بیگانہ ہے دو چار نہ ہونے پائے 

  

آپ جاتے تو ہیں اس بزم میں لیکن شبلیؔ 

حالِ دل دیکھیے اظہار نہ ہونے پائے 

شاعر: شبلی نعمانی

(مجموعۂ کلام: غزلیاتِ شبلی؛سالِ اشاعت،1995 )

Yaar   Ko   Raghbat-e-Aghyaar   Na    Nonay   Paaey

Gul-e-Tar   Ko   Hawas-e-Khaar   Na   Nonay   Paaey

 Iss   Men   Dar   Parda   Samjhtay   Hen   Wo   Apna   Hi   Gila

Shikwa-e-Charkh   Bhi    Zunhaar   Na   Nonay   Paaey

 

Fitna -e-Hashr   Jo   Aana   To    Dabay   Paaon   Zara

Bakht-e-Khafta    Mira   Baidaar   Na   Nonay   Paaey

 Haaey   Dil   Khol   K   Kucch   Keh   Na   Sakay   Soz-e-Duroon

Aablay   Ham   Sukhan -e-Khaar   Na   Nonay   Paaey

 Baagh   Ki   Sair   Ko   Jaatay   Ho   Par   Yaad   Rahay

Sabza   Begaana   Hay   Dochaar   Na   Nonay   Paaey

 Aap   Jaatay   To   Hen   Iss   Bazm   Men   Lekin   SHIBLI

Haal-e-Dil   Dekhiay   Izhaar   Na   Nonay   Paaey

 Poet: Shibli   Nomani

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -