ناتواں عشق نے آخر کیا ایسا ہم کو| شبلی نعمانی |

ناتواں عشق نے آخر کیا ایسا ہم کو| شبلی نعمانی |
ناتواں عشق نے آخر کیا ایسا ہم کو| شبلی نعمانی |

  

ناتواں عشق نے آخر کیا ایسا ہم کو

غم اٹھانے کا بھی باقی نہیں یارا ہم کو

دردِ فرقت سے ترے ضعف ہے ایسا ہم کو

خواب میں ترے دشوار ہے آنا ہم کو

جوشِ وحشت میں ہو کیا ہم کو بھلا فکرِ لباس

بس کفایت ہے جنوں دامنِ صحرا ہم کو

رہبری کی دہنِ یار کی جانب خط نے

خضر نے چشمۂ حیواں یہ دکھایا ہم کو

  

قالبِ جسم میں جان آگئی گویا شبلی

معجزہ فکر نے اپنی یہ دکھایا ہم کو

شاعر: شبلی نعمانی

(مجموعۂ کلام: غزلیاتِ شبلی؛سالِ اشاعت،1995 )

Natawaan   Eshq    Nay   Aakhir   Kiya   Aisa   Ham   Ko

Gham   Uthaanay   Ka   Bhi   Baaqi   Nahen  Yaara  Ham   Ko

 

Dard-e-Furqat   Say    Tirat   Zof    Hay    Aisa   Ham   Ko

Khaab   Men   Tiray   Dushwaar   Hahy   Aana   Ham   Ko

 Josh-e- Wehsahat   Men   Ho   Kaya   Ham   Ko   Bhala   Fikr-e-Libaas

Bass   Kafaayat   Hay   Junoon   Daaman-e- Sehraa   Ham   Ko

 Rehbari   Ki   Dahan-e-Yaar    Ki   Jaanib   Khat   Nay

Khizr   Nay   Chashma-e- Hewaan   Yeh   Dikhaaya   Ham   Ko

 Qaalib-e-Jism   Men   Jaan   Aa   Gai   Goya   SHIBLI

Mojaza   Fikr   Nay   Apni   Yeh   Dikhaaya   Ham   Ko

Poet: Shibli   Nomai

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -