اندیشہ ہائے روزِ مکافات اور میں| شبنم شکیل |

اندیشہ ہائے روزِ مکافات اور میں| شبنم شکیل |
اندیشہ ہائے روزِ مکافات اور میں| شبنم شکیل |

  

اندیشہ ہائے روزِ مکافات اور میں

اس دل کے بے شمار سوالات اور میں

خلقِ خدا پہ خلقِ خدا کی یہ دار و گیر

حیراں خدائے ارض و سماوات اور میں

کیا تھی خوشی اور اس کی تھی کیا قیمتِ خرید

اب رہ گئے ہیں ایسے حسابات اور میں

ہر لحظہ زندگی کی عنایات اور وہ

ہر لمحہ ایک مرگِ مفاجات اور میں

پہلے صداقتوں کے وہ پرچار اور دل

اب قول و فعل کے یہ تضادات اور میں

ہاروں گی میں ہی مجھ کو یہ وہم و گماں نہ تھا

آپس میں جب حریف تھے حالات اور میں

ہمراز و ہم سخن تھا مگر اس کے باوجود

ٹکرائے میرے دل کے مفادات اور میں

شاعر ہ:شبنم شکیل

(مجموعۂ کلام: شب زاد؛سالِ اشاعت،1987 )

Andeshs   Haa-e-Roz -e-Makafaat    Aor   Main

Iss   Dil   k   Be    Shumaar   Sawalaat   Aor   Main

Khalq-e-Khuda   Pe   Khalq-e-Khusda   Ki   Yeh   Daar-o-Leer

Hairaan   Khuda -e-Arz-o-Samawaat   Aor   Main

Kaya   Thi    Khushi   Aor   Iss   Ki   Thi   Kaya  Qeemat-e-Khareed

Ab   Reh   Gaey   Hen   Aisay   Hisabaat   Aor   Main

Har   Lehza   Zindagi   Ki   Enayaat   Aor   Wo

Har   Lamha   Aik   Marg-e-Mafajaat   Aor   Main

Pehlay   Sadaaqton   K   Wo   Parchaar   Aor   Dil

Ab   Qaol-o- Fail   K   Tazadaat   Aor   Main

Haroon   Gi   Main   Hi   Mujh   Ko   Yeh   Wehm-o-Gumaan   Na   Tha

Aapas   Men   Jab   Hareef    Thay   Halaat   Aor   Main

Ham   Raaz -o-Ham   Sukhan   Tha    Magar   Iss   K   Bawajood

Takraaey   Meray   Dil   K   Mafadaat     Aor    Main

Poetess: Shabnam   Shakeel

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -