بجھنے کو ہے یہ شمع مگر لو تو دیکھیے| شبنم شکیل |

بجھنے کو ہے یہ شمع مگر لو تو دیکھیے| شبنم شکیل |
بجھنے کو ہے یہ شمع مگر لو تو دیکھیے| شبنم شکیل |

  

بجھنے کو ہے یہ شمع مگر لو تو دیکھیے

آنکھوں میں خواہشات کا پرتو تو دیکھیے

وہ خواب تھا کہ وہم تھا اس پر نہ جائیے

اس کے لیے ہماری تگ و دو تو دیکھیے

تازہ ہوا ہر ایک گلِ زخم پھر سے آج

ہم پر نوازشاتِ غم ِ نو تو دیکھیے

بہکی تو فاصلوں کو حسیں تر بنا گئی

میرے تخیلات کی اِک رو تو دیکھیے

سب کو پیامِ زیست ہے شبنم کو اذنِ مرگ

دمکا وہ آفتاب مگر ضو تو دیکھیے

شاعرہ: شبنم شکیل

(مجموعۂ کلام: شب زاد؛سالِ اشاعت،1987 )

Bujhnay   Ko   Hay   Yeh   Shama   Magar   Lao   To   Daikhiay

Aankhon   Men   Khaahishaat   Ka   Partao   To   Daikhiay

Wo   Khaab   Tha   Keh   Wehm   Tha   Iss   Par   Na   Jaaiay

Uss   K   Liay   Hamaari   Tag-o-Dao   To   Daikhiay

Taaza   Hua   Har   Aik   Gul-e- Zakhm   Phir   Say   Aaj

Ham   Par   Nawazshaat-e-Gham-e-Nao   To   Daikhiay

Behki   To   Faaslon   Ko    Haseen   Tar   Banaa   Gai

Meray   Takhayyalaat   Ki   Ik   Rao   To   Daikhiay

Sab   Ko   Payaam -e-Zeest   Hay   SHABNAM   Ko   Izn-e-Marg

Damka   Wo   Aaftaab   Magar   Zao   To   Daikhiay

Poetess: Shabnam  Shakeel

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -