گئے برس کی یہی بات یادگار رہی | شبنم شکیل |

گئے برس کی یہی بات یادگار رہی | شبنم شکیل |
گئے برس کی یہی بات یادگار رہی | شبنم شکیل |

  

گئے برس کی یہی بات یادگار رہی 

فضا غموں کے لیے خوب سازگار رہی 

اگرچہ فیصلہ ہر بار اپنے حق میں ہوا 

سزائے جرم بہرحال بر قرار رہی 

بدلتی دیکھیں وفاداریاں بھی وقت کے ساتھ 

وفا جہاں کے لیے ایک کاروبار رہی 

اب اپنی ذات سے بھی اعتماد ان کا اٹھا 

وہ جن کی بات کبھی حرفِ اعتبار رہی 

خبر تھی گو اسے اب معجزے نہیں ہوتے 

حیات پھر بھی مگر محوِ انتظار رہی 

نہ کوئی حرفِ ملامت نہ کوئی کلمۂ خیر 

یہ زیست اب نہ کسی کی بھی زیرِ بار رہی 

یہ اور بات کہ دل غم میں خود کفیل ہوا 

مگر وہ آنکھ مرے غم میں اشک بار رہی 

شاعرہ: شبنم شکیل

(مجموعۂ کلام: شب زاد؛سالِ اشاعت،1987 )

Gaey   Barass   Ki   Yahi   Baat   Yaadgaar   Rahi

Fazaa   Ghamon   K   Liay   Khoob   Saazgaar   Rahi

Agarcheh    Faisla   Har   Baar   Apnay    Haq   Men    Hua

Sazaa-e-Jurm   Baharhaal    Barqaraar   Rahi

Badalti   Dekheen   Wafa    Dariyaan   Bhi   Waqt   K   Saath

Wafa   Jahan   K    Liay    Ik    Karobraar   Rahi

Ab   Apni   Zaat   Say   Bhi   Aitmaad   Un   Ka   Utha

Wo   Jin   Ki    Baat   Kabhi    Harf-e-Aitbraar   Rahi

Khabar   Thi   Go   Usay   Ab    Mojazay   Nahen   Hotay

Hayaat   Phir    Bhi   Magar   Mehv-e-Intazraar   Rahi

Na   Koi    Harf-e-Malaamat   Na   Koi   Kalma-e- Khair

Yeh    Zeest   Ab   Na   Kisi   Ki   Bhi     Zer-e-Braar   Rahi

Yeh    Aor   Baat    Keh   Dil    Gham   Men    Khud    Kafeel   Hua

Magar    Wo    Aaankh   Miray   Gham    Men   Ashkbaar   Rahi

Poetess: Shabnam   Shakeel

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -