جدھر سے آپ کا خانہ خراب گزراہے| شمیم کرہانی |

جدھر سے آپ کا خانہ خراب گزراہے| شمیم کرہانی |
جدھر سے آپ کا خانہ خراب گزراہے| شمیم کرہانی |

  

جدھر سے آپ کا خانہ خراب گزراہے

اُدھر سے قافلۂ انقلاب گزرا ہے

اُس ایک لمحے پہ قرباں ہزار بیداری

ترے خیال میں جو محوِ خواب گزرا ہے

بتا رہی ہے مرے راستے کی تاریکی

کہ اِس طرف سے کوئی آفتاب گزرا ہے

عرق میں ڈوب گئی ہے گلوں کی پیشانی

چمن سے آج کوئی بے حجاب گزرا ہے

مری نظر کی جوانی کبھی نہ جائے گی

مری نظر سے تمہارا شباب گزرا ہے

ملے ہیں اُن کی نگاہوں میں کچھ سوال ایسے

شمیم جن پہ گمانِ جواب گزرا ہے

شاعر: شمیم کرہانی

(مجموعۂ کلام: عکسِ گل؛سالِ اشاعت،1964 )

Jidhar   Say   Aap   Ka   Khaana   Kharaab   Guzra   Hay

Udhar   Qaaflya-e-Inqalaab   Guzra   Hay

Uss   Aik   Lamhay   Pe   Qurbaan    Hazaar   Baidaari

Tiray   Khayaal  Men   Jo   Mehv-e-Khaab   Guzra   Hay

Bataa   Rahi   Hay   Miray   Raastay   Ki   Tareeki

Keh   Iss   Taraf   Say   Koi   Aaftaab   Guzra   Hay

Araq   Men   Doob    Gai   Hay   Gulon   Ki   Paishaani

Chaman   Say   Aaj   Koi    Be Hijaab   Guzra   Hay

Miri   Nazar   Ki   Jawaani   Kabhi   Na    Jaaey   Gi

Miri   Nazar   Say   Tumhaara    Shabaab   Guzra   Hay

Milay   Hen   Un   Ki   Nigaahon   Men   Kuchh    Sawaal   Aisay

SHAMIM   Jin   Pe   Gumaan-e-Jawaaab   Guzra   Hay

Poet: Shamim    Karhani

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -