نذرِ اوہام ہو گئے ہم لوگ| شمیم کرہانی |

نذرِ اوہام ہو گئے ہم لوگ| شمیم کرہانی |
نذرِ اوہام ہو گئے ہم لوگ| شمیم کرہانی |

  

نذرِ اوہام ہو گئے ہم لوگ

بستۂ دام ہو گئے ہم لوگ

کل بتائیں گے اے غمِ دوراں!

آج ناکام ہو گئے ہم لوگ

رہنمائے عوام ہو نہ سکے

رہبرِ عام ہو گئے ہم لوگ

شوقِ منزل نہ ذوقِ راہ گزر

محوِ آرام ہو گئے ہم لوگ

خندۂ صبحِ نو بہارں تھے

گریۂ شام ہو گئے ہم لوگ

نسلِ فردا تری خوشی کے لیے

نذرِ آلام ہو گئے ہم لوگ

رازداری کے اہتمام کیے

اور بدنام ہو گئے ہم لوگ

بزم ِمینا و مے سجا کے شمیم

رونقِ شام ہو گئے ہم لوگ

شاعر: شمیم کرہانی

(مجموعۂ کلام: عکسِ گل؛سالِ اشاعت،1964 )

Nazr-e-Aohaam    Ho   Gaey   Ham   Log

Bsta-e-Daam    Ho   Gaey   Ham   Log

Kall   Bataaen   Gay   Ay   Gham-e-Doraan

Aaj   Na  Kaam    Ho   Gaey   Ham   Log

Rehnumaay   Awaam   Ho     Na    Sakay

Rehbar-e-Aaam    Ho   Gaey   Ham   Log

Shaoq-e-Manzil   Na   Zaoq-e- Rahguzar

Mehv-e-Aaraam    Ho   Gaey   Ham   Log

Khannda -e- Subh-e- Nao    Baharaan   Thay 

Girya-e-Shaam    Ho   Gaey   Ham   Log

Nasl-e-Fardaa   Tiri   Khushi   K   Liay

Nazr-e-Alaam    Ho   Gaey   Ham   Log

Raaz    Daari   K   Ehtamaam   Kiay

Aor   Badnaam    Ho   Gaey   Ham   Log

Bazm-e-Meena -o-May   Saja   K   SHAMIM

Raonaq-e-Shaam    Ho   Gaey   Ham   Log

Poet: Shamim   Karahani

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -