حق پسندوں سے زمانے کی دغاآج بھی ہے| شورش کاشمیری |

حق پسندوں سے زمانے کی دغاآج بھی ہے| شورش کاشمیری |
حق پسندوں سے زمانے کی دغاآج بھی ہے| شورش کاشمیری |

  

آج بھی ہے

حق پسندوں سے زمانے کی دغاآج بھی ہے

تیرے بندوں پہ ستم میرے خداآج بھی ہے

پا بجولاں ہیں غلط کار سیاست کے حریف

بامِ زنداں پہ سلاسل کی صداآج بھی ہے

ختم ہے دعوتِ ارشاد کی شمشیر کا لوچ

لالہ گوں صوفی و ملا کی قباآج بھی ہے

آل مروان بدستور ہے اورنگ نشیں

ہند میں معرکہ¿ کرب و بلا آج بھی ہے

زر پرستوں کو ہے انکار ، تو انکار کریں

میرا ایماں ہے ، غریبوں کا خداآج بھی ہے

شاعر: شورش کاشمیری

(مجموعۂ کلام: گفتنی و ناگفتنی؛سالِ اشاعت،1963 )

Aaj    Bhi   Hay

Haq   Paraston   Say   Zamaanay   Ki   Dagha   Aaj    Bhi   Hay

Teray   Bandon   Pe   Sitam   Meray   Khuda   Aaj    Bhi   Hay

Pa   Bajolaan   Hen   Ghalat   Kaar   Siyaasat    K   Hareef

Baam-e- Zindaan   Pe    Salaasal   Ki   Sadaa   Aaj    Bhi   Hay

Khatm   Hay   Daawat-e-Irshaad    Ki   Shamsheer   Ka   Loch

Laala   Goon   Soofi -o-Mulaa   Ki   Qubaa   Aaj    Bhi   Hay

Aal-e-Marwaan   Badastoor   Hay      Aorang   Nasheen

Hind    Men   Marka-e-Karb-o-Balaa   Aaj    Bhi   Hay

Zar    Parston    Ko    Hay   Inkaar   , To   Inkaar   Karen

Mera    Emaan   Hay  ,   Ghareebon   Ka    Khuda     Aaj    Bhi   Hay

Poet: Shorish    Kashmiri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -