داماں کو تار تار اگر کر سکے تو کر| شورش کاشمیری |

داماں کو تار تار اگر کر سکے تو کر| شورش کاشمیری |
داماں کو تار تار اگر کر سکے تو کر| شورش کاشمیری |

  

مشورہ

داماں کو تار تار اگر کر سکے تو کر

یہ جبر اختیار اگر کر سکے تو کر

سورج کو آسماں کی بلندی سے کھینچ لا

ذرّوں کو کوہسار اگر کر سکے تو کر

خونِ رگِ چمن سے اُٹھا حشرِ اضطراب

فطرت کو اشک بار اگر کر سکے تو کر

محنت کشوں سے مانگ نوا ہائے رست خیز

شاہوں کو زیبِ دار اگر کر سکے تو کر

حفظِ خودی پہ نظمِ جہاں کا مدار ہے

یہ راز اگر آشکار اگر کر سکے تو کر

بیدار کر ضمیر کو بے باک کر عمل

یہ عہد استوار اگر کر سکے تو کر

شاعر: شورش کاشمیری

(مجموعۂ کلام: گفتنی و ناگفتنی؛سالِ اشاعت،1963 )

Mashwara 

Damaan   Ko   Taar   Taar   Agar    Kar    Sakay  To   Kar

Yeh    Jabr    Ikhtiyaar   Agar    Kar    Sakay  To   Kar

Sooraj   Ko    Aasmaan   Ki   Bulandi   Say   Khainch   La

Zarron   Ko   Kohsaar   Agar    Kar    Sakay  To   Kar

Khoon-e-Rag-e-Chaman   Say    Utha   Hashr-e-Iztaraab

Firtat   Ko   Ashkbaar   Agar    Kar    Sakay  To   Kar

Mehnat   Kashon   Say   Maang    Nawa    Haaey   Rastkhaiz

Shaahon   Ko   Zeb-e-Daar   Agar    Kar    Sakay  To   Kar

Hifz-e-Khudi   Pe   Nazm-e-Jahan    Ka   Madaar   Hay

Yeh    Raaz    Aashkaar    Agar    Kar    Sakay  To   Kar

Baidaar   Kar    Zameer    Ko    Bebaak  Kar   Amal

Yeh    Ehd    Ustawaar   Agar    Kar    Sakay  To   Kar

Poet: Shorish    Kashmiri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -