کچھ باتیں ایسی  بھی ہوتی ہیں | حنا شہزادی |

کچھ باتیں ایسی  بھی ہوتی ہیں | حنا شہزادی |
کچھ باتیں ایسی  بھی ہوتی ہیں | حنا شہزادی |

  

کچھ باتیں ایسی  بھی ہوتی ہیں

کچھ باتیں ایسی  بھی ہوتی ہیں

جو ہونٹوں پہ  آ    کے تھم سی جاتی ہیں

کچھ درد ایسے ہوتے ہیں

جو زندگی کے ساتھ سفر کرتے ہیں

کچھ ماضی کی یادیں بھی ایسی  ہیں

جو ہمیں کرچی کرچی کرتی ہیں

کچھ غم کے  کچولے ہیں

جو جسم سے ناسور کی مانند چمٹے ہیں

کچھ ادھورے خواب بھی ہیں

جو چبھتے  ہیں میری آنکھوں میں

کبھی خاموشی سے جیا بھی جاتا ہے

جو سانپوں کی مانند ڈستی ہے

کبھی تنہائیوں سے دوستی ہوتی ہے

جو ہر پل ہمارا ساتھ دیتی ہیں

دنیا کی اس بھری محفل میں

ہر کوئی خود میں ایک آستانہ ہے

کروں بھی تو کس سے کروں یہ شکوے

یہ تو میری زندگی کا ایک قصہ ہے

شاعرہ: حنا شہزادی

Kuchh   Baaten   Aisi   Bhi   Hoti   Hen 

Kuchh   Baaten   Aisi   Bhi   Hoti   Hen 

Jo   Hoton   Pe   Aa   K   Tham   Si   Jaati   Hen

Kucch   Dard   Aisay   Bhi   Hotay   Hen

 Jo    Zindagi   K   Saath   Safar   Kartay   Hen

 Kuchh   Maazi   Ki   Yaaden   Bhi    Aisi   Hen

Jo   Hamen   Kirchi   Kirchi    Karti   Hen

 Kuchh   Gham   K    Kacholay   Hen

Jo   Jism   Say   Nasoor   Ki   Maanind    Chimtay   Hen

 Kucch   Adhooray   Khaab   Bhi   Hen

Jo   Chubhtay   Hen   Meri   Aankhon   Men

 Kabhi    Khaamoshi   Say   Jiya   Jaata   Hay

Jo   Saanpon   Ki   Maanind   Dasti   Hen

 Kabhi   Tanhaaion   Say   Dosti   Hay

Jo   Har   Pall   Hamaara   Saath   Deti   Hen

 Dunya   Ki   Iss   Bhari   Mehfill   Men

Har   Koi   Khud   Men   Aik    Aastaana   Hay

Krun   Bhi   To   Kiss   Say   Karun   Yeh   Shikway

 Yeh   To   Meri    Zindagi   Ka   Aik   Qissa   Hen

 

Poetess: Hina  Shehzadi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -