جہاں تلک بھی یہ صحرا دکھائی دیتا ہے |شکیب جلالی|

جہاں تلک بھی یہ صحرا دکھائی دیتا ہے |شکیب جلالی|
جہاں تلک بھی یہ صحرا دکھائی دیتا ہے |شکیب جلالی|

  

جہاں تلک بھی یہ صحرا دکھائی دیتا ہے 

مری طرح سے اکیلا دکھائی دیتا ہے 

نہ اتنی تیز چلے, سرپھری ہوا سے کہو 

شجر پہ ایک ہی پتا دکھائی دیتا ہے 

برا نہ مانیے لوگوں کی عیب جوئی کا 

انہیں تو دن کا بھی سایا دکھائی دیتا ہے 

یہ ایک ابر کا ٹکڑا کہاں کہاں برسے 

تمام دشت ہی پیاسا دکھائی دیتا ہے 

وہیں پہنچ کے گرائیں گے بادباں اپنے

وہ دور کوئی جزیرہ دکھائی دیتا ہے 

وہ الوداع کا منظر وہ بھیگتی پلکیں 

پسِ غبار بھی کیا کیا دکھائی دیتا ہے 

مری نگاہ سے چھپ کر کہاں رہے گا کوئی 

کہ اب تو سنگ بھی شیشا دکھائی دیتا ہے 

سمٹ کے رہ گئے آخر پہاڑ سے قد بھی 

زمیں سے ہر کوئی اونچا دکھائی دیتا ہے 

کھلی ہے دل میں کسی کے بدن کی دھوپ شکیبؔ 

ہر ایک پھول سنہرا دکھائی دیتا ہے 

شاعر: شکیب جلالی

(مجموعۂ کلام: روشنی اے روشنی )

Jahan   Talak   Bhi   Yeh   Sehra    Dikhaai    Deta   Hay

Miri   Tarah    Say   Akaila   Dikhaai    Deta   Hay

Na   Itni   Taiz    Chalay   ,  Sar    Phiri   Hawaa   Say   Kaho

Shajar   Pe   Aik   Hi   Pattaa   Dikhaai    Deta   Hay

Bura   Na    Maaniay   Logon   Ki   Aib   Joi   Ka

Unhen   To   Din   Ka   Bhi   Saaya   Dikhaai    Deta   Hay

Yeh   Aik   Abr   Ka   Tukrra   Kahan   Kahan   Barsay

Tamaam   Dasht    Hi   Payaasa   Dikhaai    Deta   Hay

Wahen   Pahunch   K   Giraaen   Gay   Baadbaan    Apnay

Wo   Door    Koi   Jazeera   Dikhaai    Deta   Hay

Wo   Alwidaa   Ka    Manzar   Wo   Bheegti   Aankhen

Pas-e-Ghubaar   Bhi   Kaya   Kaya   Dikhaai    Deta   Hay

Miri   Nigaah   Say   Chhup   Kar   Kahan   Rahay   Ga   Koi

Keh   Ab   To   Sang   Bhi    Sheesha    Dikhaai    Deta   Hay

Simat   K   Reh   Gaey   Aakhir    Pahaarr   Say   Qadd   Bhi 

Zameen   Say   Har   Koi    Ooncha   Dikhaai    Deta   Hay

Khili    Hay  Dil    Men   Kisi    K    Badan   Ki    Dhoop   SHAKEB

Har   Aik   Phool   Sunehra    Dikhaai    Deta   Hay

Poet: Shakeb    Jalali

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -